جی ایس ٹی 17سے کم کر کے15فیصد تک لایاجائے: سینٹر حاجی محمد عدیل

جی ایس ٹی 17سے کم کر کے15فیصد تک لایاجائے: سینٹر حاجی محمد عدیل

  

         اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک) حکومت کو چائیے کہ وہ بجٹ میں جنرل سیلز ٹیکس کو 17فیصد تک بڑھانے کی بجائے اس کو کم کر کے 15فیصد تک لائے کیونکہ جنرل سیلز ٹیکس میں ایک فیصد اضافے سے ملک میں مہنگائی کی ایک نئی لہر پیدا ہو گی جس سے عام آدمی کی زندگی مزید اجیرن ہو گی۔ ان خیالا ت کا اظہار عوامی نیشنل پارٹی کے سنیئر نائب صدر اور سنیٹر حاجی محمد عدیل نے اسلام آباد چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری میں تاجربرادری سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔انہوں نے کہا کہ جب پاکستان مسلم لیگ نون اپوزیشن میں تھی تو اس وقت محمد اسحاق ڈار نے بطور سنیٹر جنرل سیلز ٹیکس میں اضافے کی مخالفت کی تھی لیکن عجیب بات ہے کہ اقتدار میں آ کر بطور وزیر خزانہ انہوں نے جی ایس ٹی میں مزید ایک فیصد اضافہ کرنے کی تجویز دے دی ہے۔ انہوںنے کہ کہا کہ سینٹ کی قائمہ کمیٹی برائے فنانس، جو کے وہ خود ممبر ہیں، نے اتفاق رائے سے بجٹ میں 113سفارشات منظور کر کے حکومت کو بھجوا دی ہیں اور حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ بجٹ کو عوام دوست بنانے کیلئے ان سفارشات کو فنانس بل 2013 میں شامل کرے۔ سنیٹر حاجی محمد عدیل نے کہا کہ ٹیکس آمدن کو بہتر کرنے کیلئے حکومت زراعت سمیت ہر ٹیکس کے قابل آمدن پر ٹیکس عائد کرے ۔ انہوں نے کہا کہ صنعت و تجارت سمیت کوئی بھی شعبہ موجودہ بجٹ سے مطمئن نہیں ہے کیونکہ پاکستان مسلم لیگ (ن) کی حکومت نے یہ بجٹ عجلت اور جلد بازی میں بنایا ہے۔انہوں نے مطالبہ کیا کہ حکومت تمام اہم پالیسیوں کی تشکیل کے مراحل میں تاجر برادری کو مشاورت میں شامل کرے جس سے معیشت کیلئے مفید پالیسیاں تشکیل پائیں گی۔اپنے استقابلیہ خطاب میں اسلام آباد چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے صدر ظفر بختاوری نے کہا کہ بطور بزنس مین، سینٹر حاجی محمد عدیل نے سیاست میں ہمیشہ تاجروں وصنعتکاروں کے مفادات کا تحفظ کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ تاجر برادری کا بھی سینٹ اور نیشنل اسمبلی میں ایک گروپ ہونا چاہیے جو ان کے مفادات کا تحفظ کرنے کیلئے کام کرے۔

انہوں نے سینٹر حاجی محمد عدیل سے کہا کہ وہ پارلیمنٹ میں مذکورہ گروپ کی تشکیل کیلئے اپنا کردار ادا کریں جبکہ تمام تاجر برادری اس سلسلے میں ان کی سپورٹ کرے گی۔ظفر بختاوری نے کہا کہ تاجر وصنعتکار ملکی معیشت کی ترقی میں کلیدی کردار ادا کرتے ہیں لہذا حکومت کو چاہیے کہ وہ توانائی، سرمایہ کاری، تجارت و معیشت سمیت دیگر اہم شعبوں کیلئے پالیسیاں بناتے وقت تاجر رہنماﺅں کو مسلسل مشاورت کے عمل میں شامل کرے تا کہ مشترکہ کوششوں سے متفقہ پالیسیاں بنا کر معیشت کو مشکلات سے باہر نکالا جا سکے۔انہوں نے حکومت پر زور دیا کہ وہ آئی ایم ایف کے دباﺅ سے باہر نکل کر آزاد پالیسیاں تشکیل دے کیونکہ آئی ایم ایف کے زیر اثر بنائی گئی پالیسیوں نے ہمیشہ صنعت و تجارت اور معیشت پر منفی اثرات مرتب کئے ہیں۔ اسلام آباد چیمبر کے سابق صدر منور مغل نے اپنے خطاب میں کہا کہ ملک کے چیمبرز ہر بجٹ کی تشکیل سے پہلے حکومت کو اپنی تجاویز بھیجتے ہیں لیکن بدقسمی سے ان تجاویز کو زیر غور نہیں لایا جاتا جس سے تاجر برادری میں مایوسی پھیلتی ہے۔ ایف پی سی سی آئی کے سابق سینئر نائب صدر فضل الہٰی نے اپنے خطاب میں عوام کیلئے کی گئی سینٹر حاجی محمد عدیل کی خدمات پر روشنی ڈالی

مزید :

کامرس -