عمران فاروق کیس بیوہ اور بیٹی کی سیکیورٹی سخت کردی گئی

عمران فاروق کیس بیوہ اور بیٹی کی سیکیورٹی سخت کردی گئی

  

  لندن(بیورورپورٹ)برطانیہ کی میٹروپولیٹن پولیس نے عمران فاروق قتل کیس میں گرفتار شخص کو ستمبر تک ضمانت پر رہا کر دیا گیا‘ کیس کے نیا رخ اختیار کرنے کے بعد میٹروپولیٹن پولیس نے عمران فاروق کی بیوہ اور بیٹی کی سیکیورٹی سخت کر دی۔ غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق 52 سالہ پاکستانی نژاد برطانوی شخص کو پیرکی صبح کینیڈا سے لندن پہنچنے پر گرفتار کیا گیا تھا۔عمران فاروق قتل کیس میں گرفتارافتخار حسین سے 2 روز تک تفتیش کی تاہم بعد ازاں انہیں ضمانت پر رہا کر دیا گیا۔ ان کی ضمانت ستمبر کے مہینے تک ہو گی۔ دوسری جانب لندن میں رہائش پذیر ایم کیو ایم کے مقتول رہنما کی بیوہ اور بچوں کے حفاظتی انتظامات سخت کر دیئے گئے ہیں اور گھر پر پولیس کا پہرہ لگا دیا گیا ہے۔لندن پولیس کے افسران نے شمائلہ عمران سے ملاقات بھی کی اور انہیں تحقیقات میں اب تک ہونے والی پیش رفت سے آگاہ کیا۔ پولیس نے کیس میں سامنے آنے والے چند نئے نکات پر شمائلہ عمران سے معلومات بھی حاصل کیں۔ اس کے علاوہ برطانیہ کی سینئر وزیربرائے خارجہ امور سعیدہ وارثی نے کہا ہے برطانوی پولیس ڈاکٹر عمران فاروق قتل کی تحقیقات میں سنجیدہ ہے اور برطانوی حکومت اس معاملے میں مداخلت نہیں کر سکتی۔لندن میں ایک تقریب کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے سعیدہ وارثی نے کہا کہ برطانوی حکومت ڈاکٹر عمران فاروق قتل کیس میں مداخلت نہیں کر سکتی،پولیس اپنی تحقیقات جاری رکھے ہوئے ہے۔انہوں نے کہا کہ وہ سازشوں پر یقین نہیں رکھتیں۔سعیدہ وارثی نے مزید کہا کہ لندن میں برطانوی فوجی کے قتل کے بعد مساجد پر حملوں اور مسلمانوں کے خلاف نفرت آمیز واقعات کو روکنے کے لیے حکومت بھرپور اقدامات کر رہی ہے۔

عمرا ن فاروق

مزید :

صفحہ اول -