صوبائی وزیر قانون کابیان صوبے میں جعلی پولیس مقابلوں کا پیش خیمہ ثابت ہو گا

صوبائی وزیر قانون کابیان صوبے میں جعلی پولیس مقابلوں کا پیش خیمہ ثابت ہو گا ...

  

             لاہور (شہباز اکمل جندران// انویسٹی گیشن سیل ) صوبائی وزیر قانون کی شہہ ۔صوبے میں جعلی پولیس مقابلوں کا پیش خیمہ ثابت ہوگی۔اور پولیس کے بدنام زمانہ ملازمین تعزیرات پاکستان کی دفعات 34،96، 97، 100،324اور 353کے علاوہ انسداد دہشت گردی ایکٹ کی دفعہ 7کو کھلے عام ناجائز استعمال کرینگے۔ معلوم ہواہے کہ پنجاب کے صوبائی وزیر قانون اور سینئر وزیر رانا ثنا اللہ نے کہا ہے کہ پولیس سنگین نوعیت کے جرائم میں ملوث ملزمان کو مزاحمت پر جہنم وصل کردے۔ لیکن صوبائی وزیر کی یہ شہہ یقیناً پنجاب پولیس کے لیے خوشی اور صوبے کی عوام کے لیے پریشانی کا باعث بنے گی۔ اور صوبے میں جعلی پولیس مقابلوں کا رجحان بڑھے گا۔ معلوم ہوا ہے کہ پاکستانی آئین ، اور پاکستان میں رائج تعزیرات فوجداری قوانین تعزیرات پاکستان،انسداد دہشت گردی ایکٹ اور دیگر کوئی بھی قانون ملک میں جعلی پولیس مقابلوںکی اجازت نہیں دیتا۔ اور جعلی پولیس مقابلوں کے شوقین،تعزیرات پاکستان کی دفعات 34،96، 97، 100،324اور 353کے علاوہ انسداد دہشت گردی ایکٹ 1997کی دفعہ 7کا سہارا لیتے ہیں۔ پاکستان پینل کوڈ کی دفعہ 34ایک سے زائد جرائم پیشہ افراداور حملہ آوروں کے خلاف کاروائی کو بیان کرتی ہے۔ دفعہ 96ذاتی دفاع اور حفاظت خود اختیاری کا ذکر کرتی ہے۔دفعہ 97بھی حفاظت خود اختیاری کے حوالے سے انسانی دفاع کو بیان کرتی ہے۔ دفعہ 100جرائم پیشہ شخص کے حملے کی صورت میں اس کو قتل کرنے کی اجازت دیتی ہے۔پولیس ملازمین اس دفعہ کا سہارا لیکر ملزمان کو جعلی مقابلوں میں ہلاک کردیتے ہیں ۔اور موقف اختیار کرتے ہیں کہ ملزم نے پولیس پر حملہ کردیا تھا۔ اور پولیس نے حفاظت خود اختیاری کے تحت ملزم کو ہلاک کردیا ہے۔اسی طرح اگر کسی جگہ ملز م کسی پولیس ملازم کو زخمی کردے یا پولیس ملازم ازخود اپنے آپ کو زخمی کرنے کے بعد دفعہ 324کے تحت بھی پولیس مقابلوں سے نہیں کتراتے ۔ اور دفعہ 353کے تحت کسی سرکاری ملازم پر حملہ ظاہر کرکے بھی ملزمان کو جعلی پولیس مقابلوں میں ہلاک کیا جاتا ہے۔ اور جعلی پولیس مقابلوں میں ملزمان کو ہلا ک کرنے کے بعد ان کے خلاف انسداد دہشت گردی ایکٹ 1997کی دفعہ 7کا اضافہ بھی کرنے سے نہیں چوکتے ۔ جو اس بات کی غمازی کرتی ہے کہ ملزمان نے پولیس سے مقابلہ کرکے علاقے میں دہشت بھی پھیلائی۔یوں خدشہ ہے کہ صوبائی وزیر قانون رانا ثنا اللہ کے بیان کے بعد صوبے میں پولیس جعلی مقابلے شروع کردیگی۔

صوبائی وزیر قانون

مزید :

صفحہ اول -