امریکی ہم جنس پرستوں کی عدالت نے” سن“ لی ، ساتھیوں کے بھنگڑے

امریکی ہم جنس پرستوں کی عدالت نے” سن“ لی ، ساتھیوں کے بھنگڑے
امریکی ہم جنس پرستوں کی عدالت نے” سن“ لی ، ساتھیوں کے بھنگڑے

  

واشنگٹن (مانیٹرنگ ڈیسک) امریکی فیڈرل کورٹ نے شادی کے تحفظ کے 1996ءکے وفاقی قانون کو کالعدم قراردیتے ہوئے ہم جنس شادیوں کے حق میں فیصلہ سنادیا ہے جس کے بعد ایسے رشتوں کے حامیوں میں خوشی کی لہر دوڑ گئی۔معطل کیے گئے قانون میںہم جنس شادی شدہ جوڑوں کو سرکاری نوکریوں میں ٹیکس، صحت اور پنشن جیسے فوائد حاصل کرنے سے محروم رکھتا تھا۔میڈیارپورٹ کے مطابق چار کے مقابلے میں پانچ ججوں نے ہم جنس شادیوں کے حق میں فیصلہ دیا۔ایک دوسرے عدالتی فیصلے میں ریاست کیلیفورنیا میں بھی ہم جنسوں کی شادی میں رکاوٹ کو دور کردیا گیا۔کیلیوفورنیا کے بارے میں آنے والے فیصلے سے قبل واشنگٹن ڈی سی کے علاوہ امریکہ کی 12 ریاستوں میں ہم جنس شادیوں کو قانونی حیثیت حاصل تھی۔ہم جنس شادیوں کی مخالفت کرنے والوں نے عدالتی فیصلے پر مایوسی کا اظہار کرتے ہوئے اس کے خلاف کوششیں جاری رکھنے کا عزم ظاہر کیا ہے۔اس اقدام کے مخالف کنساس ریاست سے تعلق رکھنے والے رپبلکن کانگریس مین ٹم ہوئلسکمپ کا کہنا تھا کہ اس فیصلے میں ”بچوں کی ضروریات پر بالغوں کی خواہشات کو فوقیت دی گئی ہے۔ ہر بچے کا حق ہے کہ اس کی ایک ماں اور ایک باپ ہو۔“صدر براک اوباما نے عدالتی فیصلے کا خیر مقدم کرتے ہوئے کہا کہ اس میں ایک غطلی کو درست کیا گیا ہے۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -