عید الفطر سے قبل پیپلز پارٹی قیادت کے قریبی افراد کی گرفتاریاں متوقع

عید الفطر سے قبل پیپلز پارٹی قیادت کے قریبی افراد کی گرفتاریاں متوقع
عید الفطر سے قبل پیپلز پارٹی قیادت کے قریبی افراد کی گرفتاریاں متوقع

  

کراچی(ویب ڈیسک) پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری کی وطن واپسی کے باوجود فریال تالپور اور سید اویس مظفر کی عدم واپسی پر سیاسی حلقوں میں سوالات اٹھائے جارہے ہیں کہ کیا قریبی شخصیات کی گرفتاری اور ان کے گھروں پر چھاپہ مار کارروائی کی وجہ سے فریال تالپور اور اویس مظفر نے فی الحال بیرون ملک قیام کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ مقامی اخبار نوائے وقت نے نجی ٹی وی چینل کی رپورٹ کے حوالے سے کہاہے کہ فریال تالپور در حقیقت محمد علی شیخ کی گرفتاری کے بعد بیرون ملک چلی گئی ہیں اور فی الحال وہیں قیام کریںگی جبکہ خود پیپلز پارٹی کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری بھی حالات سازگار ہونے کا انتظار کریں گے۔ سیاسی حلقوں میں یہ بحث بھی جاری ہے کہ جب سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی کے سربراہ منظور قادر کاکا کے بارے میں تحقیقاتی اداروں نے گھیرا تنگ کرنا شروع کیا اور فشر مین کوآپریٹو سوسائٹی کے معاملات کی چھان بین شروع کی گئی تو پیپلز پارٹی کی اعلیٰ قیادت کے لئے خطرے کی گھنٹی بچ گئی تھی اور اہم کرداروں کو خبردار ہوشیار کردیا گیا تھا اس دوران منظور قادر کاکا اور نثار مورائی بیرون ملک چلے گئے اور ان کی عدم موجودگی میں ہی فشرمین سوسائٹی کے قمر صدیقی کی گرفتاری عمل میں لائی گئی اور دیگر افسران پکڑے جنہوں نے کرپشن اور بھتہ خوری کی رقم کا بڑا حصہ بلاول ہاﺅس کو دینے کا انکشاف کیا۔ کے بی سی اے کے دفتر بھی چھاپہ مارا گیا۔ گرفتاریوں اور تفتیش سے ملنے والی معلومات نے فریال تالپور اور بلاول ہاﺅس تک رابطوں کا پتہ دیا اب سندھ میں شوگر ملز سے وابستہ ایک بڑے کردار کے گرد گھیرا تنگ کیا گیا ہے اور گرفتاری کے لئے چھاپے مارے جارہے ہیں یہ صورت حال بھی سیاسی حلقے پیپلز پارٹی کی اعلیٰ قیادت کے لئے تشویشناک قرار دیئے ہیں جبکہ مقامی اخبار کا کہنا ہے کہ عید الفطر سے قبل مزید اہم اور چونکا دینے والے انکشافات اعترافی بیانات اور گرفتاریاں متوقع ہیں۔

مزید :

کراچی -