ڈایئریکٹر سمیت کے ایم سی کے 9افسر گرفتار ،تنخواہوں کی مد میں کروڑوں روپے گھوسٹ ملازمین کو دیئے جانے کا انکشاف ، بھاگنے والوں کو بھی پکڑیں گے ، ڈائریکٹر ایف آئی اے

ڈایئریکٹر سمیت کے ایم سی کے 9افسر گرفتار ،تنخواہوں کی مد میں کروڑوں روپے ...
ڈایئریکٹر سمیت کے ایم سی کے 9افسر گرفتار ،تنخواہوں کی مد میں کروڑوں روپے گھوسٹ ملازمین کو دیئے جانے کا انکشاف ، بھاگنے والوں کو بھی پکڑیں گے ، ڈائریکٹر ایف آئی اے

  

کراچی (مانیٹرنگ ڈیسک)ڈائریکٹر ایف آئی اے شاہد حیات نے کہاے کہ انہوں نے کارروائی کے دوران کے ایم سی کے ڈپٹی ڈایئریکٹر سمیت نو افسران کوگرفتار کرلیاہے ،تعلیم کی مد میں کروڑوں روپے گھوسٹ ملازمین کو دیئے جاتے تھے،ملک سے بھاگ جانے والے گھوسٹ ملازمین کو بھی پکڑیں گے ۔

تفصیلات کے مطابق ڈایئریکٹرایف آئی اے نے کہا کہ محکمہ تعلیم میں پچاس کروڑروپے سے زائد تنخواہوں کی مد میں دیے جاتے ہیں ،انہوں نے 450سے زائد اکاﺅنٹ چیک کیے ہیں اور کے ایم سی اکاﺅنٹ میں خرد برد کرنے والے تین افسروں کو بھی حراست میں لے لیا گیاہے ۔انہوں نے کہا ہے کہ کے ایم سی کے محکمہ تعلیم میں سیاسی بنیادوں پر کی جانے والی بھرتیوں کا بھی جائزہ لیاجا رہاہے اور ملک سے بھاگ جانے والے گھوسٹ ملازمین کو بھی واپس لایا جائے گا ۔انہوں نے کہا ابتدائی تحقیقات میں سامنے آیا کہ  ہر ماہ گھوسٹ ملازمین کو تنخواہوں کی مد میں تین کروڑ روپے دیئے جاتے ہیں اور ایک افسر گرفتار کیا جس کے گھر کے 21افراد کے ایم سی میں ملازم تھے جن میں صرف دو کام کرتے تھے جبکہ باقی انیس گھوسٹ ملازم تھے جن میں اس کی 64سالہ ساس بھی شامل تھی ۔

ڈائیریکٹرایف آئی انے کہا کہ ایگزیکٹ معاملہ میں قانون کے مطابق کارروائی کی ہے اور ان کا ضمنی چالان بھی پیش کر دیاگیاہے تاہم ایگزیکٹ کیس ابھی ختم نہیں ہواہے ۔شاہد حیات نے بی بی سی رپورٹ سے متعلق بات کرتے ہوئے کہا کہ حکومت نے برطانیہ کوخط لکھا دیاہے اور بی بی سی نے جن کے بارے میں رپورٹ جاری کی ہے وہ تمام لوگ ملک سے باہر موجود ہیں ۔

مزید :

کراچی -