اگر آپ کو بھی پیشاب میں دشواری یا انفیکشن جیسے مسائل کا سامنا رہتاہے تو یہ خبر ضرور پڑھ لیں،سائنسدانوں نے بنیادی وجہ ڈھونڈ نکالی

اگر آپ کو بھی پیشاب میں دشواری یا انفیکشن جیسے مسائل کا سامنا رہتاہے تو یہ ...
اگر آپ کو بھی پیشاب میں دشواری یا انفیکشن جیسے مسائل کا سامنا رہتاہے تو یہ خبر ضرور پڑھ لیں،سائنسدانوں نے بنیادی وجہ ڈھونڈ نکالی

  

واشنگٹن(مانیٹرنگ ڈیسک) اگر آپ کے مثانے میں ورم رہتے ہیں تو آپ کو فوراً اپنا پیشاب ٹیسٹ کروانا چاہیے کہ کہیں اس میں زیادہ تیزاب تو نہیں۔ایک نئی تحقیق میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ جن لوگوں کے پیشاب میں زیادہ تیزابیت ہو، ان کے پیشاب پیداکرنے اور اس کے اخراج سے منسلک اعضاءبیکٹیریا کی آماجگاہ ہوتے ہیں جن کی وجہ سے مثانے میں ہمیشہ ورم رہتا ہے۔سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ مثانے کا ورم ہونے میں انسان کی خوراک بھی اہم کردار ادا کرتی ہے۔ اس طریقے میں خوراک کے ضائع ہونے والے باریک مالیکیولز کو بیکٹیریا اپنی خوراک بناتے ہیں جس سے ان کی افزائش بڑھ جاتی ہے۔

واشنگٹن یونیورسٹی سکول آف میڈیسن کی تحقیقاتی ٹیم نے اپنی رپورٹ میںمزید بتایا ہے کہ مثانے کی انفیکشن بعض اوقات بیکٹیریا کی ایک قسم Escherichia coliکی وجہ سے بھی ہو جاتی ہے۔ پیشاب کرتے وقت جلن کا احساس اورخصیوں میں تکلیف ہونا اس انفیکشن کی علامات ہیں۔ڈاکٹر طویل عرصے سے ان بیکٹیریاکے خاتمے کے لے اینٹی بائیوٹکس مریضوں کو دے رے ہیں لیکن بیکٹیریا میں ان اینٹی بائیوٹکس کے خلاف مدافعت بڑھتی جا رہی ہے، جس کی وجہ سے ماہرین اس انفیکشن کے علاج کے لیے متبادل حکمت عملی تلاش کرنے میں لگے ہوئے ہیں۔

اب تک یہی بات مستند سمجھی جاتی رہی کہ جس شخص کے پیشاب میں تیزاب کی مقدار زیادہ ہو اس میں بیکٹیریا کی نشوونما کم ہوتی ہے لیکن اس تحقیق میں بالکل اس کے برعکس بات سامنے آئی ہے۔ اس میں بتایا گیا ہے کہ جس پیشاب کی پی ایچ تقریباً پانی کے برابر ہو وہ سائیڈرولین نامی پروٹین کی کارکردگی میں اضافہ کرتا ہے جو بیکٹیریا کی نشوونما روک کر انسان کو انفیکشن سے بچاتا ہے۔

مزید :

تعلیم و صحت -