وہ وقت جب شیخ رشید کشمیری مجاہدین کے نام پر جوا خانہ چلاتے رہے

وہ وقت جب شیخ رشید کشمیری مجاہدین کے نام پر جوا خانہ چلاتے رہے
وہ وقت جب شیخ رشید کشمیری مجاہدین کے نام پر جوا خانہ چلاتے رہے

  


 اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)سابق سینیئر اعلیٰ پولیس افسر ذوالفقار چیمہ نے اپنے ایک کالم میں انکشاف کیا ہے کہ جب وہ ایس پی راولپنڈی تعینات تھے تو انہوں نے ایک جوئے کے اڈے پر چھاپہ مارا تھا جو کہ ایک ایم این اے(شیخ رشید احمد)یہ کہہ کر چلا رہے تھے کہ انہوں نے کشمیری مجاہدین کے لیے ٹریننگ کیمپ قائم کر رکھا ہے۔وہ لکھتے ہیں

’چند روز بعد میں دفتر میں بیٹھا پنڈی کے بدنام ترین جوئے کے اڈّے کو smash کرنے کا منصوبہ بنا رہا تھا کہ فون کی گھنٹی بجی ، دوسری جانب پولیس کے ضلعی سربراہ یعنی ایس ایس پی صاحب تھے ۔ جنہوں نے جلدی اور گھبراہٹ میں کہا”  آپ کو ایک اہم لیٹر بھیجا جا رہا ہے اوپر سے فیصلہ ہوا ہے کہ آپ خوداِسکی انکوائری کرکے فوری رپورٹ بھجوائیں”۔

میں نے خط کا مضمون جاننا چاہا تو موصوف گریزاں تھے۔لگتا تھا مضمون کچھ زیادہ ہی حسّاس نوعیت کا ہے جسکے متعلق کسی کارروائی کی ذمے داری ایس ایس پی صاحب خود نہیں لیناچاہتے تھے۔  چند منٹوں میں خط پہنچ گیا، جو واقعی حساس نوعیت کا نکلا۔ جی ایچ کیو اور وزارت خارجہ کی طرف سے پنجاب حکومت سے کہا گیا تھا کہ ایم این اے صاحب اپنی تقریروں میں اعلان کرتے پھرتے ہیں کہ انھوں نے “فتح جنگ کے قریب کشمیری مجاہدین کے لیے ٹریننگ کیمپ قائم کر رکھے ہیں۔ جنکے آس پاس ہر طرف مسلحّ سیکیورٹی گارڈ تعینات ہیں، اس کا دعویٰ ہے کہ اگر کوئی زمینی راستے سے قریب آئے یا فضائی جائزہ لینے کی کوشش کرے تو اس پر فائرنگ کی جائے گی ۔ایسی خبروں سے عالمی سطح پرپاکستان کی پوزیشن خراب ہورہی ہے، پاک آرمی کو بھی اس کے خطرناک نتائج کے بارے میں تشویش ہے، حقائق دریافت کرکے بتائیں کہ ایم این اے کے فارم پرکیا ہورہا ہے اور کن لوگوں کو کس نوعیت کی ٹریننگ دی جارہی ہے؟” اخبارات میں بھی ایم این اے صاحب کے “ٹریننگ کیمپ” کے بارے میں مسلسل خبریں چھپ رہی تھیں۔‘

ذوالفقار چیمہ نے اس جوئے کے اڈے پر چھاپہ مارا اور کامیابی سے آپریشن کرتے ہوئے اس جوئے کو اڈے میں بند کروانے میں کامیاب ہوگئے لیکن شیخ رشید نے اس وقت کے وزیر اعلیٰ پنجاب سے رابطہ کیا اور رو دھو کر ایس پی کا تبادلہ کروانے میں کامیاب ہوگئے۔

مزید : قومی