یورپی یونین کا پاکستانیوں کی ویزا درخواستیں مسترد کرنے پر تاجرپریشان

یورپی یونین کا پاکستانیوں کی ویزا درخواستیں مسترد کرنے پر تاجرپریشان

اسلام آباد ( آن لائن )یورپی یونین ممالک کی جانب سے پاکستانیوں کے ویزا درخواستیں مسترد کرنے کی وجہ سے تاجر برادری پریشانی میں مبتلا ہو گئی اور، ویزا درخواستیں دینے سے کترانے لگے ہیں۔ گزشتہ سال کے دوران یورپی ممالک نے بزنس اور سیاحت کی غرض سے ویزا مسترد کرنے کا تناسب 80رہا۔ آن لائن کو موصول ہونے والے اطلاعات کے مطابق یورپی یونین کے ممالک نے پاکستانی ویزا درخواستوں کو مسترد کرنے کی وجہ سے پاکستانی سیاح اور تاجر برادری پریشانی کا شکار ہیں اور ویزا کیلئے درخواستیں دینے سے کترانے لگے۔لاہور‘اسلام آباد اور روالپنڈی سے مختلف تاجربرادری کے نمائندوں نے آن لائن کو بتایا کہ بہت سے شہری ویزا مسترد ہونے کے ڈر سے درخواستیں دائر ہی نہیں کرتے ، کیونکہ ایک ویزا درخواست کیلئے 30ہزار سے لیکر 50ہزار روپے خرچ ہوتے ہیں اس کے علاوہ وقت الگ برباد ہوتا ہے ۔ سفارتخانے میں مقررہ وقت سے زیادہ پاسپورٹ پڑے رہنے کی صورت میں کسی دوسرے ملک کے درخواست بھی دائر نہیں ہوسکتی۔اس سلسلے میں آن لائن نے یورپی ممالک کے سفیروں سے بات کی تو ملک کا نام ظاہر کرنے پر انہوں نے بتایا کہ یورپی ممالک میں سیاحت کیلئے خاص طور پر اور بزنس کیلئے ویزا جاری کرنے کا طریقہ کار نہایت مشکل ہے اس کے علاوہ یورپی یونین کے تمام ممالک کی جانب سے ویزا درخواست کا منظور ہونا لازمی ہوتا ہے ، جس کے لیے تین ہفتے درکار ہوتے ہیں ، کسی ایک ملک کی جانب سے ویزا کی درخواست مسترد ہونے کی صورت میں ویز اجاری نہیں کیا جاتا ۔ انہوں نے بتایا کہ گزشتہ سال کے دوران 80فی صد ویزا کی درخواستیں مسترد کی گئی ۔ اسلام آباد چیمبرکے سابقہ نائب صدر سید عادل حنیف نے آن لائن سے گفتگوکرتے ہوئے بتایا کہ آئی، سی، سی، آئی کے ممبرز کو بیرون ملک بزنس یاسیاحت کی غرض سے 90فی صد درخواستیں منظور ہوجاتی ہیں۔

، البتہ جو کارباری حضرات کسی تنظیم کے ساتھ رجسٹرڈ نہیں انکے بارے میں کوئی حتمی رائے نہیں دے سکتے۔چیمبر آف کامرس کے ساتھ منسلک ہونے کے لیے کارباری حضرات کیلئے ایک طریقہ کار وضع کیا گیا ہے اور انکے بیرون ملک جانے کیلئے چیمبر تمام دستاویز کی جانچ پڑتا ل کے بعد سفارشی خط جاری کیا جاتا ہے۔

مزید : کامرس