توہین عدالت ،سول جج محمد ذکریا سے 12 ستمبر کو تحریری جواب طلب

توہین عدالت ،سول جج محمد ذکریا سے 12 ستمبر کو تحریری جواب طلب

لاہور(نامہ نگار خصوصی)لاہور ہائیکورٹ نے سول جج ظفر وال محمد ذکریا کے خلاف توہین عدالت کی درخواست پر ان سے 12 ستمبر کو تحریری جواب طلب کر لیا ۔عدالت عالیہ نے تحصیل ظفر وال کے رہائشی محمد ادریس کی توہین عدالت کیس پر سماعت کی ،درخواست گزار کی طرف سے مبارک علی ایڈووکیٹ پیش ہوئے اور موقف اختیار کیا کہ عدالت عالیہ کے حکم امتناعی کے باوجود فیملی جج محمد ذکریا نے درخواست گزارکے بیٹے کی گرفتاری کا حکم جاری کیا، درخواست گزار کے وکیل نے بتایا کہ فیملی جج کی عدالت کے بیلف نے بیرون ملک سے آئے ہوئے بیٹے کوگرفتار کیا،وکیل نے نشاندہی کی کہ فیملی جج نے اعلیٰ عدالت کے حکم امتناعی کی خلاف ورزی کی،وکیل نے استدعا کی کہ عدالت سول جج محمد ذکریا کے خلاف توہین عدالت کی کارروائی عمل میں لائے۔عدالت نے درخواست پر کارروائی کرتے ہوئے فیملی جج محمد ذکریا سے 12 ستمبر تک تحریری جواب طلب کر لیا ہے۔

توہین عدالت

مزید : علاقائی