شیخو پورہ ، ماموں بھانجے سمیت بڑے بڑے سیاستدان آمنے سامنے

شیخو پورہ ، ماموں بھانجے سمیت بڑے بڑے سیاستدان آمنے سامنے

شیخوپورہ(بیورورپورٹ) نواز لیگ کی طرف سے پارٹی امیدواروں کے ناموں کا اعلان ہوتے ہی ضلع شیخوپورہ میں انتخابی میدان سج گیا اور متعدد بڑے سیاستدان ایک دوسرے کے آمنے سامنے آگئے ہیں جن میں سابق اعلیٰ فوجی افسر اور بیوروکریٹ بھی شامل ہیں،سیاسی پنڈتوں نے بھی ضلع میں اگلے الیکشن میں کانٹے دار اور بڑے دلچسپ مقابلے ہونے کی توقع ظاہر کی ہے جبکہ ضلع میں بڑی مذہبی جماعتوں نے بھی اپنے امیدوار میدان میں اتار دیے ہیں تاہم اصل مقابلے تحریک انصاف اور نواز لیگ کے امیدواروں مابین ہونگے ۔ کئی حلقوں میں ایم ایم اے ، تحریک لبیک ، تحریک اللہ اکبر اور پیپلز پارٹی کے امیدواروں کو بھی بڑی تعداد میں سپورٹرز اور ووٹرز کی حمایت حاصل ہے جو انتخابی نتائج میں اہم کردار ادا کر سکتے ہیں۔ ضلع کے چاروں قومی حلقوں میں الیکشن2013 میں نواز لیگ نے کلین سویپ کیا تھا ، این اے 119 شیخوپورہ ون میں نواز لیگ کے سابق ایم این اے رانا افضال حسین کے مقابلے میں تحریک انصاف کے امیدوار بریگیڈیر ریٹائرڈ را حت امان اللہ ہیں جن کے درمیان آپس میں ماموں بھانجے کا رشتہ بھی ہے۔ این اے 120 شیخوپورہ ٹو سابق وفاقی وزیر رانا تنویر حسین کو ان کے روایتی حریف چوہدری علی اصغر منڈا ٹف ٹائم دینے کی کوشش کر رہے ہیں جن کو تحریک انصاف نے میدان میں اتارا ہے وہ اس حلقہ میں دو مرتبہ ایم پی اے بن چکے ہیں ۔ اس حلقہ کے دلچسپ مقابلے پر ضلع بھر کے سیاسی پنڈتوں کی نظریں لگی ہوئی ہیں، این اے 121 شیخو پورہ تھری میں تین سابق اراکین قومی اسمبلی میاں جاوید لطیف ،چوہدری محمد سعید ورک اور چوہدری خرم منور منج آمنے سامنے آگئے ہیں جن کے درمیان دن بہ دن مقابلہ دلچسپ اور کانٹے دار ہو تا جا رہا ہے ۔ نواز لیگ کے مرکزی رہنما میاں جاوید لطیف اس حلقہ سے دو مرتبہ ،تحر یک انصاف کے چوہدری محمد سعید ورک ایک مرتبہ ق لیگ کی ٹکٹ پر اور قائد اعظم لیگ کے ضلعی صدر چوہدری خرم منور منج بھی ایک مرتبہ پیپلز پارٹی کی ٹکٹ پر اس حلقہ سے ایم این اے منتخب ہو چکے ہیں ۔سیاسی جغادریوں کا کہنا ہے اس حلقہ میں سیاسی وابستگیوں کیساتھ ساتھ بڑ ی برادریوں کا کردار انتخابی نتائج پر بڑے اثرات مرتب کرے گا ۔ این اے 122 شیخوپورہ فور میں تحریک انصاف کے امیدوار رانا علی سلیما ن خان ایڈووکیٹ اور نواز لیگ کے سابق ایم این اے سردار محمد عرفان ڈوگر کے درمیان دلچسپ مقابلہ ہو رہا ہے ۔ رانا علی سلیمان خان پچھلے الیکشن میں آزاد امیدوار کی حیثیت سے ایم پی اے بن کر عمران خان سے مل کر تحریک انصا ف میں شامل ہو گئے تھے، این اے 122 ایم ایم اے کے امید وار سابق ممبر ایف بی آر سرفراز احمد خان ہیں جبکہ اسی حلقہ میں آزاد امید وار کی حیثیت سے سابق وزیر جنگلات رائے اعجاز احمد خان بھی دن بہ دن اپنی انتخابی مہم کو تیزی سے آگے بڑھا رہے ہیں ۔ سیاسی پنڈتوں کا کہنا ہے ضلع شیخوپورہ کے قومی و صوبائی اسمبلی کے تیرہ حلقوں میں مذہبی جماعتوں کے ووٹوں کا کردار انتہائی اہمیت کا حامل ہے جبکہ کئی قومی و صوبائی حلقوں میں ان جماعتوں کے امیدو ا ر و ں نے بھی بڑی سیاسی جماعتوں کے امیدواروں کی طرح انتخابی مہم کیلئے لگژری گاڑیوں کے قافلوں کا استعمال کرنا شروع کر دیا ہے ۔

شیخوپورہ سیاست

مزید : صفحہ اول