باپ بننے کے خواہشمند مردوں کو زیادہ سے زیادہ کتنی عمر میں یہ خواہش پوری کر لینی چاہیے؟ سائنسدانوں نے خبردار کردیا

باپ بننے کے خواہشمند مردوں کو زیادہ سے زیادہ کتنی عمر میں یہ خواہش پوری کر ...
باپ بننے کے خواہشمند مردوں کو زیادہ سے زیادہ کتنی عمر میں یہ خواہش پوری کر لینی چاہیے؟ سائنسدانوں نے خبردار کردیا

  


لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) آج کے جدید دور میں کیریئر بنانے کے چکر میں شادی اور اولاد کا حصول ثانوی حیثیت اختیار کر چکا ہے اور مردوخواتین کافی عمر میں جا کر فیملی شروع کرنے کا سوچتے ہیں تاہم اب سائنسدانوں نے مردوں کو اس حوالے سے خبردار کردیا ہے۔ دی مرر کے مطابق یونیورسٹی کالج لندن کے سائنسدانوں نے مردوں کو بتایا ہے کہ وہ باپ بننے کے خواہش مند ہیں تو زیادہ سے زیادہ سے زیادہ 40سال کی عمر تک بچے پیدا کر لیں۔ اس سے زائد عمر میں جا کر مردوں کے بانجھ ہو جانے کا خطرہ کئی گنا بڑھ جاتا ہے۔

سائنسدانوں نے یہ وارننگ 4200مردوں پر کی جانے والی تحقیق کے نتائج میں کی ہے، جن میں معلوم ہوا ہے کہ جن مردوں کی عمر 50سال سے زائد ہو جائیں انہیں اولاد کے حصول میں انتہائی مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے، حتیٰ کہ آئی وی ایف کے ذریعے بھی ان کے سپرمز بچہ پیدا کرنے کی صلاحیت کھو چکے ہوتے ہیں۔ اس تحقیق میں ثابت ہوا کہ 35سال کی عمر کے مردوں کی نسبت 51سال کی عمر کے مردوں میں بچہ پیدا کرنے کی صلاحیت 34فیصد کم ہو جاتی ہے۔ تحقیقاتی ٹیم کے سربراہ ڈاکٹر گے مورس کا کہنا تھا کہ ”بڑھتی عمر کے ساتھ ساتھ مردوں کے سپرمز کی مقدار اور معیار دونوں گرنا شروع ہو جاتے ہیں اور 50سال کی عمر کو پہنچ کر ان میں ایک تہائی سے زائد کمی واقع ہو چکی ہوتی ہے، چنانچہ اس عمر میں بچہ پیدا کرنا بہت مشکل ہوجاتا ہے۔“

مزید : تعلیم و صحت