کورونا ٹیسٹ،کرکٹر محمد حفیظ کے مختلف نتائج، نیا تنازعہ؟

کورونا ٹیسٹ،کرکٹر محمد حفیظ کے مختلف نتائج، نیا تنازعہ؟

  

سینئر آل راؤنڈر محمد حفیظ کا کورونا ٹیسٹ مثبت یا منفی ہونے کا معاملہ پُراسرار بن گیا اور ٹیسٹ کے علاوہ کرکٹر کے رویے پر بھی سوالات اٹھنے لگے ہیں،پاکستان کرکٹ بورڈ نے دورہئ انگلینڈ کے لئے 30 کھلاڑیوں کا مجموعی انتخاب کیا کہ انہی میں سے ٹیسٹ اور ٹی20 میچوں کے لئے ٹیمیں چنی جا سکیں،ایسا احتیاطی نقطہ نظر سے کیا گیا کہ کھلاڑیوں کے انتخاب سے قبل سب کے کورونا ٹیسٹ لازم قرار دیئے گئے اور فیصلہ ہونا تھا کہ روانگی سے قبل پاکستان اور انگلستان پہنچ کر سیریز سے قبل دوبارہ کورونا ٹیسٹ ہوں گے۔ ٹیسٹ اور ٹی20 میں محدود کھلاڑی دونوں فارمیٹ کے ہوتے ہیں، جیسے بابر اعظم اور سرفراز احمد ہیں، باقی کھلاڑی الگ الگ چنے جاتے ہیں۔ اِس بار دونوں ٹیموں کے لئے اکٹھا انتخاب ہونا ہے کہ سب ایک ہی بار انگلستان پہنچیں اور ٹیم سلیکشن وہاں بھی ہو۔ پی سی بی نے اپنی لیب سے کورونا ٹیسٹ کرائے تو دس کھلاڑیوں کے مثبت آ گئے، ان میں محمد حفیظ بھی شامل ہیں۔ یوں دوسرے کھلاڑیوں سمیت ان کی روانگی بھی مشکوک ہو گئی، تاہم محمد حفیظ نے اعتماد نہ کیا اور ذاتی طور پر نجی لیبارٹری سے اپنا ٹیسٹ کروایا، اس کا نتیجہ ”منفی“ کی صورت میں نکلا اور بورڈ کے لئے نہ صرف مشکل ہوئی،بلکہ ٹیسٹ نتائج ہی مشکوک ہو گئے، ہمارے سٹاف رپورٹر کے مطابق بورڈ کی لیب والوں نے محمد حفیظ کے پہلے سے موجود سیمپل کا دوبارہ ٹیسٹ کیا تو نتیجہ پھر مثبت تھا۔یوں ایک تنازعہ پیدا ہو گیا،اسے حل کرنے کے لئے بورڈ نے محمد حفیظ کا نیا ٹیسٹ کرانے کا فیصلہ کیا،اور نتیجے کے بعد ان کے حوالے سے فیصلہ ہو گا،بورڈ یوں بھی ٹیسٹ مثبت آنے والے کھلاڑیوں کے متبادل کی تلاش میں ہے۔ محمد حفیظ کی رپورٹوں میں تضاد نے پہلے سے موجود ٹیسٹ لیب اور نتائج میں تضاد کو تقویت دی ہے کہ پہلے سے بھی ایسی شکایات موجود ہیں،اِس لئے حکومت کو بھی ادھر توجہ دینا چاہئے اور کورونا کنٹرول قومی کمیٹی کو ان شکایات کا جائزہ لے کر لیبارٹریوں کی نامزدگی کرنا چاہئے کہ لوگ اعتماد کر سکیں۔

مزید :

رائے -اداریہ -