بنوں میں بجلی لوڈ شیڈنگ 20گھنٹوں سے بھی تجاوز کرگئی

  بنوں میں بجلی لوڈ شیڈنگ 20گھنٹوں سے بھی تجاوز کرگئی

  

بنوں (بیورورپورٹ)ضلع بنوں میں بجلی لوڈ شیڈنگ 20گھنٹوں سے بھی تجاوز کرگئی چھ،چھ اور سات سات گھنٹے بجلی کا غائب ہونا معمول بن گیا ہے حکومت کی جانب سے لاک ڈاؤن ختم ہوتے ہی بجلی کا لاک ڈاؤن شروع ہوگیا ہے ان خیالات کا ہیوی ٹرانسپورٹ یونین بنوں کے صدر ملک نیک دراز خان منڈان نے میڈیا کے نمائندوں سے خصوصی بات چیت کرتے ہوئے کیا انہوں نے کہا کہ ایک طرف حکومت عوام کو کورونا سے بچانے کیلئے گھروں تک محدود رہنے کی تلقین کررہی ہے تو دوسری طرف قیامت خیز گرمی کے اس موسم میں واپڈا پیسکو کی جانب سے شہری علاقوں میں 20گھنٹے جبکہ دیہی علاقوں میں 22گھنٹے لوڈ شیڈنگ کرکے عوام کو گھروں سے باہر نکلنے پر مجبور کررہی ہے انہوں نے کہا کہ شدید گرمی میں واپڈا پیسکو کی جانب سے غیر اعلانیہ اور ظالمانہ بجلی لوڈ شیڈنگ کی وجہ سے کاروبار تباہ ہوگئے ہیں بچوں،بوڑٖھوں،خواتین اور بیماروں کو شدید مشکلات کا سامان ہے انہوں نے وزیر اعظم پاکستان عمران خان،وفاقی وزیر پانی وبجلی،وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا،گورنر خیبر پختونخوا،پیسکو کے صوبائی چیف اور کمشنر بنوں ڈویژن وڈپٹی کمشنر بنوں سے پرزور مطالبہ کیا کہ وہ بنوں میں ظالمانہ بجلی لوڈ شیڈنگ کا نوٹس لیں اور ظالمانہ بجلی لوڈ شیڈنگ سے بنوں کے عوام کو نجات دلائیں بصورت دیگر عوام مجبور ہوکر ایک مرتبہ پھر تاریخ دہرانئیں گے اور واپڈا دفاتر کا اینٹ سے اینٹ بجانے پر مجبور ہوجائیں گے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -