مورنگا کی کاشت سے مادر وطن کی تقدیر بدلی جا سکتی ہے، ماہرین جامعہ زرعیہ

  مورنگا کی کاشت سے مادر وطن کی تقدیر بدلی جا سکتی ہے، ماہرین جامعہ زرعیہ

  

فیصل آباد (اے پی پی)جامعہ زرعیہ فیصل آباد کے ماہرین زراعت نے کہا ہے کہ سوہانجنا جسے عرف عام میں مورنگا بھی کہا جاتا ہے بے شمار خوبیوں سے مالا مال پودا ہے جس کا کوئی نعم البدل نہیں لہٰذا اس کی کاشت سے مادر وطن کی تقدیر بدلی جا سکتی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ یہ پودا اپنے اندر دہی اور دودھ سے دو گنا زیادہ پروٹین، گاجر سے 4گنازیادہ وٹامن اے، سنگترے سے 7گنا زیادہ وٹامن سی، کیلے سے3گنا زیادہ پوٹاشیم رکھتاہے نیز ادویات سازی، صنعت مقاصد، کاسمیٹکس، اشیائے خوردنی میں بھی اس کا بھر پور استعمال کیا جا سکتا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ امریکہ میں اس کے پتے چائے کے طورپر جبکہ اس کے بیجوں کا تیل ککنگ آئل اور بیجوں کا سفوف پانی کو صاف کرنے کیلئے استعمال کیا جا رہاہے۔ انہوں نے بتایاکہ مقامی زرعی تحقیقاتی ادارہ، جامعہ زرعیہ اور محکمہ زراعت کے اشتراک سے مورنگا کی زیادہ سے زیادہ کاشت یقینی بنانے کیلئے بھر پور اقدامات کررہاہے لہٰذا کاشتکاروں کو بھی اس جانب خصوصی توجہ مرکوز کرنی چاہیے۔

مزید :

کامرس -