مودی کشمیریوں کی نسل کشی کی طرف جا رہاہے، عالمی برادری مقبوضہ کشمیر میں مظالم پر بھارت سے جوا ب طلب کر ے: عمرا ن خان

مودی کشمیریوں کی نسل کشی کی طرف جا رہاہے، عالمی برادری مقبوضہ کشمیر میں ...

  

 مظفر آباد (مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں)وزیراعظم عمران خان ایک روزہ دورے پر آزاد کشمیر کے دارالحکومت مظفر آباد پہنچے اور اپنے خطاب میں مقبوضہ کشمیر میں بھارتی مظالم کی شدید مذمت کی۔وزیراعظم عمران خان نے مظفرآباد میں تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ میں نے دنیا کو مودی کی آر ایس ایس اور ان کے مظالم سے آگاہ کیا، یہ مقبوضہ کشمیر میں نسل کشی کی طرف جارہے ہیں، آر ایس ایس والے ہٹلر کی نازی پارٹی کو رول ماڈل سمجھتے ہیں۔ وزیراعظم عمران خان نے مزید کہا کہ مودی کی جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی آر ایس ایس کی پیداوار ہے، مودی نے گجرات میں بھی مسلمانوں پر ظلم کیا،خواتین سے زیادتیاں کی گئیں، بھارت کی 8 لاکھ فوج 80 لاکھ کشمیریوں پر منصوبہ بندی سے ظلم کررہی ہے، بھارت اور آر ایس ایس کی انتہا پسند مودی کی حکومت مقبوضہ کشمیر میں ظلم کررہی ہے۔وزیراعظم نے کہا کہ 12 لاکھ کشمیریوں کو آزاد کشمیر میں صحت کارڈ ملے گا،جو ایل او سی پر مشکل زندگی گزار رہے ہیں ان کی مدد کرنے پر فخر ہے۔وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ احساس پروگرام سے ایک لاکھ 38 ہزار خاندان کو پیسے ملیں گے۔عمران خان نے کہا کہ مودی ایک عام آدمی نہیں ہے یہ آر ایس ایس کی پیداوار ہے، جو مسلمانوں کے ساتھ ہو رہا ہے وہ ہی ہٹلر نے یہودیوں کے ساتھ کیا تھا، میں نے کہا تھا میں کشمیر کا سفیر بنوں گا، میں نے دنیا کو بتایا کہ آر ایس ایس کون ہیں۔عمران خان نے کہا کہ ہندوستان میں اصل میں مسلمانوں کو ٹارگٹ کیا جاتا ہے، مودی اصل میں تباہی ہندوستان کی کر رہا ہے،، یہ لوگ مقبوضہ کشمیر کے لوگوں کو طاقت سے ڈرا رہے ہیں، ان کے ظلم سے کشمیر کی موومنٹ دوبارہ سے اوپر آجاتی ہے۔انہوں نے کہا کہ بھارت کے پڑھے لکھے عوام بھی سمجھ رہے ہیں کہ مودی تباہی کی طرف ملک کو لے کر جارہا ہے، بھارت خوف اور دہشت پھیلا کر ڈرانے کی کوشش کررہا ہے، بھارت اپنی اس کوشش سے کشمیریوں کو ڈرا نہیں سکتا، مقبوضہ کشمیر کے حالات تمام دنیا کے سامنے لے کر جاؤں گا۔وزیراعظم نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر کے مسئلے پر ہر ملک کے سربراہ کو آگاہ کرتا ہوں، ہم نے مسئلہ کشمیر اقوام متحدہ میں اٹھایا، پوری دنیا کی میڈیا کی توجہ تھی، کشمیر کا کاز دنیا بھر میں اٹھ رہا تھا کہ ایک صاحب آزادی مارچ لے کر آگئے، آزادی مارچ نے کشمیرکاز کو نقصان پہنچایا، ہم دوبارہ دنیا بھر میں کشمیر کا مسئلہ اٹھائیں گے۔وزیراعظم عمران خان کا مزید کہنا تھا کہ مشکل حالات میں بھی آزاد کشمیر کا بجٹ بڑھایا ہے کم نہیں کیا، آزاد کشمیر، فاٹا، بلوچستان اور گلگت بلتستان کا بجٹ بڑھائیں گے، 5 اگست تک ہم دوبارہ سے کشمیر کا مسئلہ اٹھائیں گے۔ مظفر آباد میں اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ جب تک پسماندہ اور کم ترقی یافتہ علاقے ترقی نہیں کریں گے اس وقت تک پاکستان ترقی نہیں کرے گا،کورونا وائرس کی وجہ سے معیشت پر منفی اثر پڑا لیکن ان مشکل حالات کے باوجود ہم نے آزاد جموں و کشمیر کی بجٹ میں سالانہ گرانٹ میں کمی نہیں کی بلکہ اضافہ کیا ہے۔ اسی طرح وفاقی حکومت نے گلگت بلتستان، اور بلوچستان کے بجٹ میں بھی نامساعد حالات کے باوجود کمی نہیں کی، آزاد جموں و کشمیر انتظامیہ کی آزاد کشمیر میں کورونا وائرس کے کم کیسز اور وبا کی روک تھام کے حوالے سے اقدامات حوصلہ افزاء ہیں وزیر اعظم عمران خان کی زیر صدارت آزاد جموں و کشمیر میں کورونا وائرس کی صورتحال اور ترقیاتی منصوبوں میں پیشرفت کے حوالے سے جائزہ اجلاس منعقد ہوا ،وزیر برائے امور کشمیر و گلگت بلتستان علی امین گنڈاپور، صدر آزاد جموں و کشمیر سردار مسعود خان، وزیر اعظم آزاد جموں و کشمیر راجہ فاروق حیدر، معاون خصوصی ڈاکٹر ثانیہ نشتر، آزاد جموں و کشمیر کابینہ کے وزرا و سینیئر افسران نے اجلاس میں شرکت کی۔چیف سیکرٹری آزاد جموں و کشمیر نے اجلاس کو آزاد جموں و کشمیر میں کورونا وائرس کی صورتحال، ہسپتالوں میں کورونا وائرس متاثرین کے علاج و دیکھ بھال، ڈاکٹروں اور طبی عملے کی استعداد کو بڑھانے کے حوالے سے حکومت پاکستان کی طرف سے بھرپور معاونت،وائرس کی روک تھام کے لئے عوام میں ایس او پیز پر عملدرآمد ممکن بنانے کے اقدامات، ہیلتھ کارڈ کی آزاد جموں و کشمیر کے ہر شہری میں تقسیم کو جلد ممکن بنانے، لائن آف کنٹرول کے متاثرین کی فلاح و بہبود، ترقیاتی منصوبوں پر پیشرفت اور مستقبل کے منصوبوں پر عملدرآمد کے حوالے سے روڈمیپ پر تفصیلی بریفنگ دی گئی۔ چیف سیکرٹری نے حکومت پاکستان کی طرف سے وبا کے دوران تکنیکی معاونت اور بروقت سامان کی فراہمی کا خصوصی ذکر کرتے ہوئے کہا کہ گزشتہ مہینوں میں آزاد جموں و کشمیر انتظامیہ کو حکومت پاکستان کی طرف سے توقعات سے بڑھ کر مدد ملی جس کے لئے حکومت آزاد جموں و کشمیر حکومت پاکستان کی تہہ دل سے شکر گزار ہے۔ صدر اور وزیراعظم آزاد جموں و کشمیر نے وزیراعظم عمران خان کی آزاد جموں و کشمیر کے عوام کی فلاح و بہبود، ترقی کے لئے دلچسپی اور وفاقی حکومت کی ہر ممکن معاونت پر وزیراعظم کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ تشدد کا شکار ہونے والوں کی حمایت کے عالمی دن کے موقع پر وزیراعظم عمران خان کا آزاد جموں و کشمیر کا دورہ مقبوضہ جموں وکشمیر کے مظلوم اور بھارتی ریاستی دہشتگردی کے شکار بھائیوں سے اظہار یکجہتی کا عکاس ہے۔۔ وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ مقبوضہ کشمیر میں خواتین، بچوں کو تشدد کا نشانہ بنایا جا رہا ہے، عالمی برادری کشمیر کی صورتحال پر بھارت سے جواب طلب کرے۔ وزیراعظم عمران خان نے تشدد کے شکار افراد کی حمایت کے عالمی دن پر ٹویٹس کرتے ہوئے کہا کہ مقبوضہ کشمیر میں عورتوں اور بچوں کو پلیٹ گن، جنسی تشدد، بجلی کے جھٹکے اور ذہنی و جسمانی تشدد کا نشانہ بنایا جا رہا ہے، اقوام متحدہ کی انسانی حقوق تنظیم کی رپورٹ نے بھارتی قابض افواج کے مظالم کی تفصیل بیان کی گئیزیر اعظم عمران خان نے اقلیتوں کے حقوق کے تحفظ اور اس ضمن میں مجوزہ قانون سازی کا عمل کو تیز کرنے کی ہدایت کرتے ہوئے کہا ہے کہ اقلیتوں کے حقوق کا تحفظ اور زندگی کے ہر شعبے میں یکساں مواقع کی فراہمی کو یقینی بنانا حکومت کی اولین ترجیح ہے۔انہوں نے ان خیالات کا اظہار پاکستان تحریک انصاف سے تعلق رکھنے والے اقلیتی برادری کے ممبران قومی اسمبلی سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔وزیر اعظم سے ملاقات کرنے والے ممبران میں جے پرکاش، شنیلہ رتھ، لعل چند، رمیش کمار، جمشید تھامس شامل تھے۔ اس موقع پر وزیر برائے مذہبی امور نورالحق قادری اور پاکستان تحریک انصاف کے قومی اسمبلی میں چیف وہپ ملک محمد عامر ڈوگر بھی موجود تھے۔اقلیتی ممبران نے وزیراعظم کو اپنے متعلقہ حلقوں، خصوصاً اقلیتی برادری سے متعلقہ امور کے حوالے سے آگاہ کیا۔وزیراعظم نے ممبران سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ اقلیتی برادری پاکستان کی ترقی و خوشحالی کے سفر میں جو کردار ادا کر رہی ہے وہ لائق تحسین ہے۔عمران خان نے کہا کہ اقلیتوں کے حقوق کا تحفظ اور زندگی کے ہر شعبے میں یکساں مواقع کی فراہمی کو یقینی بنانا حکومت کی اولین ترجیح ہے- ہم سب نے اپنی صفوں میں اتحاد اور مذہبی ہم آہنگی کو فروغ دیتے ہوئے پاکستان کو آگے لے کر جانا ہے۔ وزیر اعظم عمران خان نے کہا ہے کہ پارٹی میں اختلافات کا تاثر درست نہیں، تمام ارکان اور اتحادیوں کو ساتھ لیکر چلیں گے۔ تحریک انصاف اراکین اسمبلی کے تحفظات کے معاملے پر وزیر اعظم عمران خان متحرک ہوگئے، گزشتہ روز بھی پارلیمنٹ میں اپنے چمبر میں موجود رہے، ارکان اسمبلی سے ملاقاتیں کیں۔ وزیر اعظم نے پارٹی اراکین سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ کورونا وائرس پر جلد قابو پالیں گے۔ذرائع کے مطابق ارکان اسمبلی نے پارٹی امور پر مشاورت نہ کرنے اور ترقیاتی کاموں کے لئے فنڈز نہ ملنے پر وزیر اعظم سے گلے شکوے کیے۔ ارکان اسمبلی نے وزیر اعظم کو اپنے حلقے کے مسائل سے بھی آگاہ کیا۔ وزیر اعظم عمران خان نے ارکان اسمبلی کو جلد فنڈز کے اجرائکی یقین دہانی کرائی اور کہا ترقیاتی فنڈز کورونا وبا کے پیش نظر ہی روکے گئے ہیں۔وزیر اعظم نے کہا ہے کورونا وائرس کے دوران ایک کروڑ 20 لاکھ سے زائد خاندانوں کی امداد کی گئی، عوامی نمائندے اپنے حلقوں میں ریلیف پروگرام کی نگرانی کریں اور انتظامیہ کے ساتھ ملکر تمام امور کا جائزہ لیں۔وزیر اعظم عمران خان نے کہا ہے کہ زرعی شعبے کی ترقی حکومت کی اولین ترجیح ہے،کسانوں کی سہولت کاری کے لیے ہر ممکنہ اقدامات اٹھائینگے،زرعی ٹیوب ویلوں پر بجلی کے نرخوں کے حوالے سے مطالبے پر غور کیا جائے، زرعی شعبے میں پیداوار میں اضافے اور جدید ٹیکنالوجی متعارف کرانے کے لیے دوست ملک چین سے اشتراک کیا جارہا ہے، کسانوں کو درپیش مسائل کے حوالے سے صوبائی حکومتوں کی مشاورت سے ترجیحی بنیادوں پر لائحہ عمل تشکیل دیا جائے۔ جمعہ کو وزیر اعظم عمران خان سے کسان اتحاد کے وفد نے ملاقات کی۔وفد میں صدر کسان اتحاد خالد محمود کھوکھر، سیکرٹری جنرل چوہدری احسان اکرم اور صوبائی صدر رضوان اقبال شامل تھے۔وفاقی وزیر برائے نیشنل فوڈ سیکیورٹی سید فخرامام، چیئرپرسن خصوصی کمیٹی برائے زرعی پیداوار شاندانہ گلزار بھی ملاقات میں موجود تھے۔وفد نے زرعی شعبے کی ترقی کے لیے وزیر اعظم کی گہری دلچسپی اور اقدامات کو سراہا۔وفد نے وزیر اعظم کو کسانوں کو درپیش مسائل سے بھی آگاہ کیا۔ ٹیوب ویلوں کے حوالے سے بجلی کے نرخ، فرٹیلائزر کی مناسب قیمت پر فراہمی، معیاری بیج کی دستیابی، کراپ انشورنس و دیگر اہم معاملات پر تفصیلی گفتگو کی گئی۔وزیر اعظم نے وفد سے بات چیت کے دوران اس عزم کا اعادہ کیا کہ زرعی شعبے کی ترقی حکومت کی اولین ترجیح ہے لہذا حکومت کسانوں کی سہولت کاری کے لیے ہر ممکنہ اقدامات اٹھائے گی

وزیر اعظم

مزید :

صفحہ اول -