عید پر مویشی منڈیا ں شہروں سے باہر لگیں گی، کورونا سے مزید 73افراد جاں بحق

    عید پر مویشی منڈیا ں شہروں سے باہر لگیں گی، کورونا سے مزید 73افراد جاں بحق

  

لاہور (جنرل رپورٹر، مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں)حکومت پنجاب نے عیدالاضحٰی پر شہری حدود سے باہر مویشی منڈیاں لگانے کا فیصلہ کیا ہے۔مویشی منڈیوں کے قیام کیلیے وزیرقانون پنجاب کی سربراہی میں 9 رکنی کمیٹی قائم کردی گئی ہے جبکہ کمیٹی کو کورونا وباکا پھیلاؤ روکنے کے لیے ایس او پیزتیار کرنے کا ٹاسک دیا گیا ہے۔ایس او پیز کی خلاف ورزی پر مویشی مالکان اور خریداروں کو جرمانے کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔اس حوالے سے وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار نے کہا ہے کہ قربانی کے جانور دیہی آبادی کی معیشت کا اہم جزو ہیں، چاہتے ہیں کہ دیہی آبادی کی معیشت پھلے پھولے۔حکومت پنجاب نے فیصلہ کیا ہے کہ اس سال مویشی منڈیاں جولائی میں شہری حدود سے باہر لگائی جائیں گی، منڈیوں کے مقامات کا تعین متعلقہ ڈپٹی کمشنرز کریں گے، مویشی منڈیوں میں کوئی بیمار جانور فروخت کے لیے نہ لایا جائے، جانور چیک کرنے کیلیے بھی خصوصی کمیٹیاں تشکیل دیدی گئیں ہیں۔

لاہور،اسلام آباد، کراچی، پشاور (سٹاف رپورٹر، مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں)ملک بھر میں جمعہ کے روز کورونا کے مزید 3078 کیسز اور 73 ہلاکتیں رپورٹ ہوئیں، مجموعی کیسز 2 لاکھ کے قریب پہنچ گئے ملک میں کورونا سے مزید 73 افراد انتقال کر گئے جس کے بعد اموات کی مجموعی تعداد 4004 ہوگئی جب کہ نئے کیسز سامنے آنے کے بعد مریضوں کی تعداد 197724 تک پہنچ گئی ہے۔اب تک پنجاب میں کورونا سے 1629 اور سندھ میں 1205 افراد انتقال کرچکے ہیں جب کہ خیبر پختونخوا میں 890 افراد جاں بحق ہو چکے ہیں۔اس کے علاوہ بلوچستان میں 113، اسلام آباد میں 119، گلگت بلتستان میں 23 اور آزاد کشمیر میں مہلک وائرس سے 25 افراد جاں بحق ہو چکے ہیں۔ بروز جمعہ ملک بھر سے کورونا کے مزید 3078 کیسز اور 73 ہلاکتیں رپورٹ ہوئی ہیں جن میں سندھ سے 1150 کیسز 27 ہلاکتیں، پنجاب 796 کیسز 27 ہلاکتیں، خیبر پختونخوا سے 640 کیسز اور 11 اموات، اسلام آباد 271 کیسز 4 ہلاکتیں، بلوچستان سے 170 کیسز اور 4 ہلاکتیں، آزاد کشمیر سے 32 جبکہ گلگت بلتستان سے 19 کیسز سامنے آئے۔سندھ سے کورونا کے مزید 1150 کیسز اور 27 ہلاکتیں رپورٹ ہوئی ہیں جن کی تصدیق وزیراعلیٰ سندھ نے کی۔مراد علی شاہ نے بذریعہ ٹوئٹر بتایا کہ گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوراں 5103 نئیٹیسٹ کیے گئے جن میں 1150 نئے کیسز اور 27 اموات ہوئی۔مراد علی شاہ کے مطابق صوبے میں کورونا کے کیسز کی مجموعی تعداد 76318 اور ہلاکتیں 1205 ہوچکی ہیں۔پنجاب سے کورونا کے مزید 796 کیسز اور 27 ہلاکتیں سامنے آئی ہیں جن کی تصدیق پی ڈی ایم اے نے کی۔صوبائی ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی کے مطابق صوبے میں کورونا کے کل کیسز کی تعداد 71978 اور اموت 1629 تک جا پہنچی ہے۔پی ڈی ایم اے کے مطابق پنجاب میں اب تک کورونا سے 21009 افراد صحت یاب ہوچکے ہیں۔وفاقی دارالحکومت سے کورونا کے مزید 271 کیسز اور 4 اموات سامنے آئی ہیں جس کی تصدیق سرکاری پورٹل پر کی گئی ہے۔پورٹل کے مطابق اسلام آباد میں کیسز کی مجموعی تعداد 11981 اور اموات 119 ہو چکی ہیں۔اسلام آباد میں اب تک کورونا وائرس سے 5,839 افراد صحت یاب ہو چکے ہیں۔آزاد کشمیر سے کورونا کے مزید 32 کیسز سامنے ا?ئے ہیں جو سرکاری پورٹل پر رپورٹ کی گئی ہے۔پورٹل کے مطابق آزاد کشمیر میں کورونا کے کل کیسز کی تعداد 962 اور اموات کی تعداد 25 ہو گئی ہے۔سرکاری پورٹل کے مطابق ا?زاد کشمیر میں کورونا سے متاثرہ 395 افراد صحت یاب ہو چکے ہیں۔خیبر پختونخوا میں جمعے کو کورونا وائرس سے مزید 11 افراد جاں بحق ہوگئے جس کے بعد صوبے میں ہلاکتوں کی تعداد 890 ہوگئی۔دوسری طرفکورونا وائرس دنیا بھر میں 4 لاکھ 87 ہزار سے زائد زندگیاں لے گیا، امریکا میں مریضوں کی تعداد 24 لاکھ سے زیادہ ہوگئی جبکہ اموات ایک لاکھ 24 ہزار سے زیادہ ہوگئیں۔غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق نیویارک، نیوجرسی اور کنیٹی کٹ میں متاثرہ علاقوں سے آنے والوں کو تنہائی اختیار کرنے کی ہدایت کی گئی ہے۔برازیل میں 53 ہزار، برطانیہ میں 43 ہزار اور بھارت میں تقریبا 15 ہزار افراد کورونا وائرس کی وجہ سے جان سے جاچکے ہیں جبکہ بھارت میں ایک روز میں 17 ہزار افراد میں وائرس کی تصدیق بھی ہوئی ہے۔دنیا بھر میں 96 لاکھ سے زیادہ افراد بیمار اور اب تک 52 لاکھ سے زیادہ مریض صحت یاب ہوچکے ہیں۔ امریکہ میں جمعرات کو کورونا کی 40 ہزار انفیکشنز ریکارڈ کی گئی ہیں۔انفیکشنز اور ہسپتالوں کے داخلے میں تیزی سے اضافے کی وجہ سے کچھ ریاستوں نے پابندیوں کو باکل نرم کر کے ریاستوں کو دوبارہ کھولنے کے منصوبوں کو فی الحال روک دیا ہے۔اس سے قبل جے ایچ یو نے سب سے زیادہ انفیکشنز 24 اپریل کو ریکارڈ کی تھیں جو کہ 36 ہزار 400 تھیں۔ یہ اس وقت تھا جب کم ٹیسٹنگ کی گئی تھی۔امریکہ میں اس وقت تقریباً 24 لاکھ تصدیق شدہ متاثرین ہیں جبکہ 1 لاکھ 22 ہزار 370 اموات ہو چکی ہیں جو کہ کسی بھی ملک سے زیادہ ہیں۔اگرچہ روزانہ کی بنیاد پر مریضوں میں اضافہ کچھ تو زیادہ ٹیسٹنگ کی وجہ سے ہے، لیکن کچھ علاقوں میں مثبت ٹیسٹ کی شرح بھی بڑھ رہی ہے۔

کورونا ہلاکتیں

اسلام آباد(سٹاف رپورٹر،آن لائن)وفاقی وزیر برائے منصوبہ بندی،ترقی،اصلاحات اسد عمر نے کہا ہے کہ حکومت کے مؤثر اقدامات اور عوام کی جانب سے احتیاطی تدابیر پر عمل درآمد کے بہتر نتائج ا رہے ہیں ۔ابھی خطرہ ٹلا نہیں اگر حفاظتی اقدامات اور احتیاطی تدابیر پر عمل نہ کیا گیا توصورت حال خراب ہو سکتی ہے۔30جون تک کورونا کے کیسز2 لاکھ 25ہزارکے لگ بھگ رہنے کا امکان ہے۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے جمعہ کو این سی او سی میں وفاقی وزیر اطلاعات سینیٹر شبلی فراز کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے کیا۔ وفاقی وزیر برائے منصوبہ بندی اسد عمر نے کہا کہ ماہرین کی رائے کے مطابق جون تک کورونا کیسز کی تعداد3لاکھ تک پہنچنے کا امکان ظاہر کیا گیا تھا تاہم کورونا کیسز کی موجودہ صورت حال کے تناظر میں 30 جون تک کورونا کیسز کی تعداد 2لاکھ25ہزار کے لگ بھگ رہنے کا امکان ہے۔انہوں نے کہا کہ ان اعداد و شمار کے تجزیہ سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ اگر ہم صحیح کام کریں گے تو صورت حال قابو میں رہے گی۔وفاقی وزیر نے کہا کہ قوم نے احساس زمہ داری کا مظاہرہ کیا جبکہ حکومت نے ایس اوپیز کی خلاف ورزی پر انتظامی کارروائیاں کیں۔انہوں نے کہا کہ نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سنٹر سے کورونا سے بچاؤ کے لئے رہنماء اصول جاری کئے گئے۔جس میں پرہجوم اور عوامی مقامات پر ماسک پہننا لازم قرار دیا گیا۔این سی اوسی نے 4جون کو صوبوں کو سماجی فاصلے اور ماسک پہننے کی خلاف ورزی پر انتظامی کارروائیاں کرنے کی ہدایت کی۔تمام صوبوں نے ان ہدایات پر عمل کیا۔انہوں نے کہا کہ صوبوں سے ہفتہ میں 3بار اعداد و شمار سے این سی اوسی کو آ گاہ کیا جاتا ہے جبکہ دیگر اداروں سے معلومات فراہم کی جاتی ہیں۔ان اعداد و شمار سے ظاہر ہوتا ہے کہ بہت زیادہ لوگ حفاظتی اقدامات پر عمل درآمد کر رہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ وفاق نے ملک بھر میں جون کے آخر تک آکسیجن والے ایک ہزار بیڈز فراہم کرنے اور جولائی کے آ خر تک دو ہزار سے زائد آکسیجن والے بیڈز فراہم کرنے کا کہا تھا جس پر تیزی سے عمل درآمد جاری ہے۔

اسد عمر

مزید :

صفحہ اول -