بلاول کے شہباز شریف، فضل الرحمن، آفتاب شیر پاؤ سے ٹیلی فونک رابطے

  بلاول کے شہباز شریف، فضل الرحمن، آفتاب شیر پاؤ سے ٹیلی فونک رابطے

  

لاہور (جنرل رپورٹر،مانیٹرنگ ڈیسک) پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری کان مسلم لیگ کے صدر اور قائد حزبِ اختلاف شہباز شریف سے ٹیلی فونک رابطہ ہوا جس میں بجٹ کو مکمل طور پر مسترد کرنے اور اگلے ہفتے آل پارٹیز کانفرنس بلانے پر اتفاق کیا گیاہے۔ پیپلزپارٹی کے چیئرمن بلاول بھٹو زرداری نے شہباز شریف کو ٹیلی فون کر کے انکی مزاج پرسی کی اور ان کی صحت سے متعلق دریافت کیا اور انکی جلد صحت یابی کی دعا بھی کی۔دونوں رہنماؤں نے ملک کی مجموعی صورتحال پر بھی تبادلہ خیال کیا اور تحریک انصاف کی جانب سے پیش کئے گئے قومی بجٹ کو مکمل طور پر مسترد کرنے پر اتفاق کیا جبکہ اگلے ہفتے آل پارٹیز کانفرنس بلانے پر بھی مشاورت کی۔شہباز شریف نے مزاج پرسی اور نیک تمناؤں پر بلاول بھٹو زرداری کا شکریہ ادا کیا۔ قائد حزب اختلاف نے سابق صدر اورپیپلز پارٹی کے شریک چیئرمین آصف زرداری کیلئے نیک تمناؤں کا اظہار کیا اور بلاول بھٹو زرداری سے ان کے والد کی صحت کے حوالے سے بھی دریافت کیا۔دریں اثناء بلاول بھٹو زرداری نے سربراہ جے یو آئی مولانا فضل الرحمان اور قومی وطن پارٹی کے سربراہ آفتاب احمدشیرپاؤ سے بھی علیحدہ علیحدہ ٹیلیفونک رابطہ کیا اورحکومتی بجٹ کو مکمل مسترد کرنے پر اتفاق اور آئندہ کی حکمت عملی طے کرنے کیلئے آل پارٹیز کانفرنس (اے پی سی) بلانے پر مشاورت مکمل کی۔ذرائع کے مطابق چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے مولانا فضل الرحمان کو ٹیلی فون کیا جس میں موجودہ ملکی سیاسی صورتحال خا ص طور پر کرونا وائرس کے پھیلاؤ سے متعلق تبادلہ خیال کیا گیا۔دونوں رہنماؤں میں حکومتی بجٹ مکمل طور پر مسترد کرنے پر اتفاق کیا گیا۔ اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ ملک میں حکومتی نااہلی کی وجہ سے کرونا وائرس پھیلا۔ پاکستان کے عوام غریب دشمن بجٹ کو مسترد کرچکے ہیں۔ ملکی آئین پر حملوں کو کسی صورت برداشت نہیں کریں گے۔ دونوں رہنماؤ ں کے درمیان آئندہ ہفتے اے پی سی بلانے پر بھی مشاورت ہوئی۔ چیئرمین پی پی پی بلاول بھٹو زرداری اور قومی وطن پارٹی کے سربراہ آفتاب شیرپاؤ کے درمیان بھی ٹیلی فونک رابطہ ہوا۔ دونوں رہنماؤں نے ملک میں کرونا وائرس سے بگڑتی صورت حال پر تشویش کا اظہار کیا۔چیئرمین بلاول بھٹو زرداری اور آفتاب شیرپاؤ میں ملکی سیاسی معاملات بھی زیربحث آئے۔بلاول بھٹو نے کہا کہ حکومت ملکی معیشت کو تباہی سے دوچار کرچکی ہے۔ عوام دشمن بجٹ کو کسی صورت تسلیم نہیں کیا جاسکتا۔ عمران خان مسلسل کنفیوژڈ رہے اور کرونا وائرس ملک کے کونے کونے میں پھیل گیا۔عمران خان 18ویں آئینی ترمیم کا نام لے کر ملکی آئین کو نشانہ بنارہے ہیں۔

ٹیلیفونک رابطے

اسلام آباد(آن لائن)پاکستان پیپلزپارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ اپنے گریبان میں جھانکے بغیر دنیا بھر میں ہونے والے پولیس تشدد کی مذمت کرنا بہت آسان ہے، تشدد کو جرم قرار دینا اس روایت کے خاتمے کی جانب پہلا قدم ہوگا۔ اپنے ٹویٹر پیغام میں چیئرمین بلاول بھٹو نے کہا کہ تشدد کا جو بھی ذمہ دار ہو اس کو حساب دینے کیلئے کٹہرے میں لانا ہوگا۔تشدد ایک جرم ہے جسے قانون سازی کرکے جرم قرار دینا ضروری ہے۔

بلاول بھٹو

مزید :

صفحہ اول -