برائلر مرغی نیوٹریشن اور جنیٹک سائنس کاحسینِ امتراج ہے

برائلر مرغی نیوٹریشن اور جنیٹک سائنس کاحسینِ امتراج ہے

  

پولٹری کی صنعت پاکستان کی سب سے بڑی ایگرو بیس صنعت ہے اور عوام کیلئے حیوانی پروٹین حاصل کرنے کا سستا ترین ذریعہ بھی ہے ،خاص طور پر

ایک ایسی معیشت میں جو بہت زیادہ مثالی نہیں ہے، پولٹری سیکٹر کی کامیابیوں کو بے مثال قرار دیا جا سکتا ہے اور یہ کہنا مبالغہ نہ ہوگا کہ یہ پاکستان کی معیشت کا واحد سیکٹر ہے جو ہر طرح کے حالات میں آگے ہی آگے بڑھتا رہا ، اس دوران جنگیں لگیں، برڈ فلو جیسی بیماریاں آئیں جو اپنے جلو میں افواہوں کا ایک طوفان بھی لے آئیں، پھر شادیوں کے کھانوں پر پابندی کا آرڈی نینس آ گیا اس آرڈی نینس کے ذریعے پہلے تو شادی کھانوں کو سرے سے ہی ممنوع قرار دیدیا گیا ، پھر ون ڈش تک محدود کر دیا گیا۔ اسی طرح ملک میں مشکل اقتصادی حالات آتے رہے لیکن پولٹری کی صنعت ان تمام مشکل حالات کے باوجود کامیابیوں کی منازل طے کرتی رہی، پولٹری کی صنعت سے وابستہ افراد فارمرز اور پاکستان پولٹری ایسوسی ایشن کو اس بات پر خراجِ تحسین پیش کیا جانا چاہیے ۔

پولٹری سیکٹرکو عام طور پر فیڈ کی تیاری کے حوالے سے مختلف قسم کے متضاد سوالات کا سامنا رہتا ہے اور فیڈ کی تیاری کے مختلف مراحل سے ناواقفیت کے باوجود چند لوگوں کی جانب سے اس کے بارے میں بات کی جاتی ہے ، اس لئے میں اپنے قارئین کو فیڈ کی تیاری کے حوالے مختلف مراحل کے بارے میں بتایا چاتا ہوں۔پولٹری فیڈ میں استعمال ہونے والے اجزاء میں 60فیصد سے زیادہ زرعی اجناس شامل ہوتی ہیں جن کے معیار کو فیکٹری میں داخل ہونے سے پہلے لیبارٹری کی مدد سے جانچا جاتا ہے۔ اگر کسی ٹرک میں غیر معیاری زرعی اجناس(مکئی ، گندم وغیرہ) آئیں تو ان کو گیٹ پر ہی مسترد کرکے واپس کردیا جاتا ہے۔ علاوہ ازیں آئل سیڈ سے تیل نکالنے کے بعد جو پھوک بچ جاتا ہے وہ پروٹین کا ذریعہ ہے جوکہ فیڈ میں 30فیصد سے 35فیصد بطور پروٹین استعمال ہوتا ہے۔ باقی جو اجزا فیڈ میں استعمال ہوتے ہیں ان میں Molases شوگر ملوں کی بائی پراڈکٹ ہے۔اس کے علاوہ تقریباً بیس قسم کے وٹامن اور نمکیات جو کہ نہ صرف مرغی بلکہ انسانی صحت کیلئے بھی بے حد مفید ہوتے ہیں، یہ سارے اجزاء دنیا بھر کے بہترین ذرائع سے برآمد کر کے جدید تحقیقی رہنمائی میں مجوزہ شرح سے مستقل طور پر خوراک میں شامل کئے جاتے ہیں۔ان تمام اجزا سے تیار کردہ فیڈ انتہائی صحتمندانہ طریقے سے تیار کی جاتی ہے۔مرغی کا گوشت جو ہم اور آپ کھاتے ہیں یہ جن کی ایجاد ہے وہی اس کی فیڈ کے فارمولے بھی دنیا کو بتاتے ہیں کیونکہ پہلے ’’ہائبرڈ‘‘مرغی تیار کی گئی پھر اس کی جسمانی ضرورت کے مطابق فیڈ تیار کی گئی۔ اسی مرغی اور اسی فارمولا سے وہ بھی فیڈ تیار کرتے ہیں اور وہی مرغی یورپ اور امریکہ والے 41کلوگرام فی کس سالانہ استعمال کرتے ہیں جبکہ دنیا میں سالانہ اوسطاً فی کس 13کلوگرام مرغی کا گوشت استعمال ہوتا ہے۔ پاکستان میں بمشکل 7کلوگرام فی کس سالانہ مرغی کا گوشت استعمال ہوتا ہے۔ سالانہ 41کلوگرام مرغی کا گوشت کھانے والوں کی اوسط عمر 80سال سے زیادہ اور صحت قابل رشک ہے جبکہ ہماری اوسط عمر اور صحت دونوں ہی پریشان کن حد تک نیچے ہیں۔

اس وقت پاکستان میں درجنوں فیڈ ملز بہترین ٹیکنالوجی سے لیس ہمہ تن صنعت مرغبانی کی خدمت جانفشانی سے کر رہی ہیں۔ پاکستان میں مکئی کی فصل جو کہ تقریباً 45-50 لاکھ ٹن سالانہ ہوتی ہے کا اسی فیصد حصہ فیڈ ملز ہی خریدتی ہیں جس کی وجہ سے مکئی کی کاشت نہ صرف دن بدن بڑھ رہی ہے بلکہ کاشتکار کو نہایت مناسب قیمت بھی مل رہی ہے، لہٰذا یہ کہا جا سکتا ہے کہ جہاں فیڈ انڈسٹری عوام کو سستی مرغی فراہم کرنے میں اپنا مثبت کردار ادا کر رہی ہے وہیں مکئی کے کاشتکار کی بھی خدمت کر رہی ہے۔

ایک ابہام جو کہ عام طور پر پایا جاتا ہے کہ برائلرمرغی صرف 35 دنوں میں 2 کلو کی کیسے ہو جاتی ہے ؟ یہ کرشمہ در اصل دو جدید سائنسی علوم یعنی نیوٹریشن اور جنیٹک سائنس کا امتراج ہے ،جس کی وجہ سے ایسی خصوصیات کی حامل نسل تیار کی جاتی ہے جس میں جلدی وزن کرنے کی صلاحیت ہو، غذا سے متعلقہ سائنس یہ بتاتی ہے کہ اس نسل کو روزانہ کی بنیاد پر کون کون سے غذائی اجزاء کی کتنی مقدار میں ضرورت ہے۔میں اس بات کو مزید سادہ یوں بیان کرتا ہوں کہ اگر یہی خوراک آپ دیسی مرغی کو کھلائیں تو وہ برائلر مرغی کی طرح وزن نہیں بڑھائے گی اور دوسری طرف برائلر مرغی کو آپ وہی کچھ کھلائیں جو دیسی مرغی چل پھر کر کھاتی ہے تو وہ بھی اتنی تیزی سے وزن نہیں کرے گی۔ حقائق یہ ہیں کہ فارمی مرغی کو جومتوازی فیڈ دی جاتی ہے اس کو Micro-levelپربیلنس کیا جاتا ہے۔ ایسی Balancedخوراک تو اس ملک کے امیر ترین لوگوں کو بھی میسر ہے۔ امیروں کی خوراک کا بیلنس نہیں ہوپاتا کیونکہ وہ بھی پروٹین اپنی جسمانی ضرورت سے زیادہ کھاتے ہیں اور کبھی انرجی اپنی جسمانی ضرورت سے زیادہ استعمال کرتے ہیں اور غریب آدمی کا حال اُلٹ ہے کہ نہ تو اس کو جسمانی ضرورت کے مطابق پروٹین میسر ہے اور نہ ہی انرجی۔

مرغی کا گوشت اور انڈہ پروٹین کے حصول کے سستے ذرائع ہیں جن کو سازش کے تحت غلط افواہیں پھیلا کر غریب آدمی سے دور رکھا جارہا ہے۔ میری اس ملک کے عوام سے یہ گذارش ہے کہ وہ ان سازشوں میں نہ آئیں اور مرغی کا گوشت اور انڈے بے دریغ استعمال کریں۔ اسی میں اُن کی صحت کا راز چھپا ہے۔ اس مرغی کو جس قدر صاف پانی مہیا کیا جاتا ہے وہ شاید اس ملک کے پانچ فیصد لوگوں کو بھی میسر نہیں۔ فارموں پر R-Oپلانٹ نصب ہیں، کم از کم فلٹر تو ضرور نصب ہیں۔ اگر وہ بھی نہیں تو پانی کو مرغیوں تک پہنچنے سے پہلے دوائیوں کے ذریعے ٹریٹ کیا جاتاہے۔ ذرا آپ سوچیں کہ ہمارے ملک میں کتنے فیصد لوگوں کو صاف پانی میسر ہے۔ یقیناًان کی تعداد بہت کم ہے۔ آپ دیکھیں کہ مرغیوں کو رہنے کے لیے صاف ستھرے اور موسمی اثرات سے محفوظ پولٹری ہاؤسز مہیا کیے جاتے ہیں۔ ذرا سوچیے کہ کتنے فیصد لوگوں کو چھت میسر ہے، موسمی اثرات سے بچاؤ تو بہت دور کی بات ہے۔ علاوہ ازیں مرغی فارموں کو بجلی کی لوڈشیڈنگ کے اثرات سے محفوظ رکھنے کے لیے ہر فارم پر جنریٹروں کی سہولت مہیا کی جاتی ہے تاکہ صحتمند مرغی ہی آپ تک پہنچ سکے۔ صرف مرغی کا صحتمند گوشت ہی آپ کی جسمانی اور ذہنی صحت کا ضامن ہوسکتا ہے کیونکہ صحتمند جسم میں ہی صحتمند دماغ ہوتا ہے۔ مرغی کے لیے جو ادویات استعمال ہوتی ہیں ان کا معیار لیبارٹری میں چیک کیا جاتا ہے۔ اُن کی سٹوریج کے لیے خاص اہتمام کیا جاتا ہے تاکہ اُن کی صحت کے بارے میں کسی قسم کا سمجھوتہ نہ ہوسکے۔ کاش جتنا مرغیوں کی صحت کا خیال رکھا جاتا ہے ا سکے دس فیصد کے مساوی بھی انسانوں کا خیال رکھا جائے تو ہماری قوم دنیا میں مقام حاصل کرسکتی ہے۔

مزید :

ایڈیشن 2 -