میں میری بیٹیاں اور بیٹا الیکشن کیلئے تیار ہیں :آصف زرداری

میں میری بیٹیاں اور بیٹا الیکشن کیلئے تیار ہیں :آصف زرداری

 لاہور (مانیٹرنگ ڈیسک ،آئی این پی) سابق صدر آصف علی زرداری نے کہا ہے کہ الیکشن کا وقت قریب ہے اور پیپلز پارٹی الیکشن کیلئے تیار ہے، ان کو پتہ چل جائے گا کہ الیکشن کہتے کسے ہیں اور لڑے کیسے جاتے ہیں۔ پیپلز پارٹی کا ایک وفد تمام پارٹیوں سے مذاکرات کرے گا تاکہ پورے پاکستان، بالخصوص پنجاب اور شہر لاہور میں صاف شفاف الیکشن کرایا جا سکے۔تفصیلات کے مطابق آصف علی زرداری سینئر پارٹی رہنماعزیز الرحمان چن کی رہائش گاہ آئے جہاں انہوں نے کارکنوں کیساتھ خطاب کرتے ہوئے کہا کہ آج کارکنوں کا ولولہ، جوش دیکھ کر پتہ لگتا ہے کہ پیپلز پارٹی اور کارکن اب دوبارہ ایک مقابلے کیلئے تیار ہیں، پچھلی دفعہ ہم پر ہتھکڑیاں لگی ہوئی تھیں لیکن اس دفعہ کوئی ہتھکڑی نہیں، میں خود اور بلاول میدان میں ہیں، آپ کی بیٹیاں میدان میں ہیں، ہم سب ساتھ نکل کر میدان میں مقابلہ کریں گے اور ان کو پتہ چل جائے گا کہ الیکشن کسے کہتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ الیکشن کا وقت آنے والا ہے، ان دوستوں کو اور آپ کو سمجھنا چاہئے کہ پاکستان پیپلز پارٹی نے کبھی بھی شکست نہیں کھائی۔ پیپلز پارٹی نے پنجاب سے کبھی شکست نہیں کھائی البتہ آر او الیکشن سے شکست ضرور کھائی ہے، آر او الیکشن پہلے بھی ہوئے تھے اور اب بھی ہو رہے ہیں لیکن ہم نے ان کا مقابلہ کرنا ہے۔انہوں نے کہا کہ پاکستان کی تمام سیاسی جماعتوں کے پاس پیپلز پارٹی کا ایک وفد بھیجیں گے جو مذاکرات کرے گا کہ کس طرح پورے پاکستان بالخصوص پنجاب اور شہر لاہور میں صاف اور شفاف الیکشن کر سکیں۔ آپ دوستوں کا ولولہ دیکھا ہے اور قربانیاں بھی یاد ہیں، آج شہیدوں کی بہنیں یہاں موجود ہیں، میں نے وہ دن بھی دیکھے کہ جب بی بی آیا کرتی تھیں تو پورا لاہور بند ہو جایا کرتا تھا، اب بھی ایسا ہی ہو گا، ہم جب نکلیں گے تو پورا لاہور بند ہو گا۔دوسری طرف اپنے ایک بیان میں آصف زرداری نے کہا ہے کہ دہشت گردی اور عسکریت پسندی کے خاتمے اور علاقائی امن کیلئے یہ بات انتہائی ضروری ہے کہ افغانستان کے ساتھ سرحدوں کی مینجمنٹ باہمی مشاورت سے کی جائے۔ سرحدوں کومشاورت سے باقائدہ طریقے سے محفوظ بنا نے ہی سے ایک دوسرے پر سرحدوں کے پار سے دہشتگردوں کی مداخلت کے الزامات کا خاتمہ ہو سکے گا اور انہیں الزامات کی وجہ سے پاکستان اور برادر پڑوسی ملک افغانستان کے تعلقات کشیدہ ہو گئے ہیں۔ سابق صدر نے ان رپورٹوں پر تبصرہ کرتے ہوئے یہ بات کہی جن میں کہا گیا ہے کہ باجوڑ اور مومند ایجنسیوں میں افغانستان کی سرحد پر باڑ لگانے کا کام شروع ہو گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ انتہائی افسوس کا مقام ہے کہ حال میں دونوں ممالک کے درمیان تعلقات بہت خراب ہو گئے ہیں اور کہا کہ دونوں ملک عدم اعتماد اور شک کی فضا ختم کرنے کے لئے سنجیدہ کوششیں کریں۔ سرحدوں کی باہمی مشاورت سے مینیجمنٹ کا معاملہ بہت تاخیرکا شکار ہو چکا ہیاور اب اس میں تاخیر نہیں کی جانی چاہئے۔ اس بارے فیصلے میں تاخیر ایک بحران کو دعوت دینا ہے۔ سابق صدر نے اس امید کا اظہار کیا کہ باڑ لگانے کا خیر مقدم وہ سب لوگ کریں گے جو عسکریت کا خاتمہ چاہتے ہیں اور الزامات کا سلسلہ بند ہو جائے گا۔

مزید : علاقائی