لنڈی کوتل ،خیبر سیاسی اتحاد اور ٹرانسپورٹرز کا احتجاجی مظاہرہ

لنڈی کوتل ،خیبر سیاسی اتحاد اور ٹرانسپورٹرز کا احتجاجی مظاہرہ

  

خیبر ایجنسی (بیورورپورٹ) لنڈیکوتل بازار میں خیبر سیاسی اتحاد اور ٹرانسپوٹروں نے ایجنسی ہیڈکوارٹرہسپتال کی نجکاری اور بارڈر پر پاکستانی ڈرائیوار اور کلینر پر پاسپورٹ شر ط لاگو کرنے کے خلاف مشترکہ احتجاجی مظاہرہ کیا ،مظاہرین نے ہسپتال چوک سے باچا خان چوک تک احتجاجی واک بھی کیا اور مطالبات کے حق میں نعرے لگارہے تھے مظاہرین سے خطاب کر تے ہو ئے جماعت اسلامی فاٹاکے نائب آمیر زرنور آفریدی ،پاکستا ن ییپلز پارٹی کے صدر حضرت ولی آفریدی ،عوامی نیشنل پارٹی کے صدر شاہ حسین شنواری ،خیبر یوتھ کے صدر عامر آفریدی ور ٹرانسپورٹ یونین کے صدر شاکر آفریدی نے کہا کہ ایجنسی ہیڈ کوارٹر ہسپتال کی نجکاری سے غریب عوام کو کوئی فائدہ نہیں بلکہ عوام پر مذید بوجھ ڈالنا ہیں انہوں نے کہا کہ اگر حکومت ہسپتال کو ٹھیک نہیں کر سکتا تو ایک ٹھکیدار کیسے ٹھیک کرے گا ہسپتال کی نجکاری حکومت کی ناکامی ہیں کسی صورت نجکاری نہیں ہونے دینگے انہوں نے کہا کہ حکومت ایک شخص کو فائدہ پہنچانے کیلئے سینکڑوں لوگوں کو بے روزگار کررہے ہیں جو لنڈیکوتل کے عوام کے ساتھ ظلم اور زیادتی ہے مقررین نے کہا کہ ہسپتال کو چار سال پہلے اے گریڈ کا درجہ دینے کا اعلان کیا گیا تھا جس کیلئے ہسپتال میں نئے بلاکس اور کروڑوں روپے کی جدید مشینری بھی خرید لی گئی ہیں لیکن اب ہسپتال کو نجکاری کیلئے سی گریڈ کے طور پر پیش کیا گیا ہیں کیونکہ قانونی طور پر اے گریڈ کی نجکاری نہیں ہو سکتی ہے خیبر سیاسی اتحاد کے رہنماوں اور ٹرانسپوٹروں نے بارڈر پر پاکستانی ڈرائیوار اور کلینر کیلئے پاسپورٹ ویزہ شرط کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ پہلے کی طرح بارڈر پر پاکستانی ڈرائیوار کلینر کو شناختی کارڈ پر افغانستا ن آنے جانے کی اجازت دی جائے کیونکہ افغان حکومت ان سے پاسپورٹ ویزہ کا مطالبہ نہیں کرتے انہوں نے کہا کہ پہلے بتیس دن بارڈر بند ش سے انکی گاڑیاں کھڑی تھی لیکن اب بارڈر کھلنے کے بعد شرائط کی وجہ سے کھڑے ہو گئے ہیں جسکی وجہ سے ٹرانسپورٹروں کا بہت زیادہ نقصان ہو اہیں ٹرانسپوٹروں نے کمپنیوں سے مطالبہ کیا کہ بارڈر بندش کے دوران ایک مہینے کھڑی ہونے کی دیہاڑی دیں تاکہ انکے نقصانات کم ہو سکے اخر میں انہوں نے دھمکی دی کہ اگر انکے مطالبات تسلیم نہیں کئے گئے تو احتجاج میں شدت لائینگے جس کی تمام تر ذمہ داری حکومت پر عائد ہو گی

مزید :

راولپنڈی صفحہ اول -