’میں نے سر پر بالوں کو رنگنے کیلئے ہیئر کلر لگایا اور پھر ٹیسٹ کروائے تو دیکھا کہ میرے خون میں۔۔۔‘ نوجوان لڑکی نے انتہائی خوفناک بات کہہ دی، ایسا کام ہوگیا کہ جان کر آپ بھی اپنے بالوں کو رنگنے سے پہلے بار بار سوچیں گے

’میں نے سر پر بالوں کو رنگنے کیلئے ہیئر کلر لگایا اور پھر ٹیسٹ کروائے تو ...
’میں نے سر پر بالوں کو رنگنے کیلئے ہیئر کلر لگایا اور پھر ٹیسٹ کروائے تو دیکھا کہ میرے خون میں۔۔۔‘ نوجوان لڑکی نے انتہائی خوفناک بات کہہ دی، ایسا کام ہوگیا کہ جان کر آپ بھی اپنے بالوں کو رنگنے سے پہلے بار بار سوچیں گے

  

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) خواتین حسن کی زیبائش کے لئے ’ ہیئرڈائی‘کا بکثرت استعمال کرتی ہیں اور آئے روز اپنے بالوں کو نئے رنگ میں رنگتی رہتی ہیں۔ گزشتہ دنوں ایک برطانوی خاتون نے بھی اپنے بالوں کو نیا رنگ دینے کی کوشش کی اور اس کا وہ حشر ہوا کہ اس نے آئندہ ہیئرڈائی کا استعمال کرنے سے توبہ کر لی۔ میل آن لائن کی رپورٹ کے مطابق مانچسٹر کی رہائشی 24سالہ میک اپ آرٹسٹ جیما ویلیمز نے اپنے بالوں میں ہیئرڈائی لگایا جس سے اسے شدید قسم کی انفیکشن ہو گئی اور وہ سیپٹیسیمیا (Septicemia)نامی خون کی بیماری میں مبتلا ہو گئی۔ اس کے خون میں زہر پھیل گیا اور اس کے سر سے لے کر گردن تک جلد پر چھالے اور شدید زخم بن گئے۔

”میرے نو عمر بچے کو کینسر ہو گیا، علاج سے فرق نہ پڑا تو ڈاکٹروں سے چھپ چھپ کر اسے یہ غیرقانونی چیز دیتی رہی اور آج وہ صحت مند ہو گیا ہے“ خاتون نے ایسا راز بتا دیا کہ جان کر ڈاکٹر بھی حیران پریشان رہ گئے

رپورٹ کے مطابق جیما کو فوری طور پر ہسپتال لیجایا گیا جہاں ڈاکٹراس کا علاج کر رہے ہیں لیکن ایک ہفتہ گزر جانے کے باوجود اس کی حالت میں کوئی خاطرخواہ بہتری نہیں آئی تاہم اس کی جان بچ گئی ہے۔ ڈاکٹروں کا کہنا تھا کہ’سیپٹیسیمیا انفیکشن کے باعث لاحق ہوتی ہے اور اس میں بیکٹیریا کی بڑی تعداد خون میں داخل ہو جاتی ہے جو خون کو زہریلا کر دیتی ہے۔ جیما کے خون میں زہر اس قدر پھیل چکا تھا کہ اگر وہ ایک گھنٹہ لیٹ ہو جاتی تو اس کی موت یقینی تھی۔ ‘ جیما نے Clairol Niceکمپنی کا ہیئر ڈائی استعمال کیا تھا لیکن اس نے اس کے استعمال سے قبل پیچ ٹیسٹ (Patch Test)نہیں کیا تھا۔ اس کا کہنا ہے کہ ”میرے اور موت کے درمیان صرف ایک گھنٹے کا فاصلہ رہ گیا تھا۔ آئندہ میں کبھی ہیئر ڈائی کو ہاتھ بھی نہیں لگاﺅں گی۔“

مزید :

ڈیلی بائیٹس -