’میں ہیروئن کے نشے کی لت میں مبتلا تھا، لیکن پھر ایک دن میرے ساتھ ایسا واقعہ رونما ہوا کہ نشہ چھوڑ کر یہ کاروبار شروع کردیا اور اب انتہائی کم عرصے میں کروڑ پتی بن چکا ہوں‘ نوجوان کی ایسی کہانی جس سے ہر شہری سبق حاصل کرسکتا ہے

’میں ہیروئن کے نشے کی لت میں مبتلا تھا، لیکن پھر ایک دن میرے ساتھ ایسا واقعہ ...
’میں ہیروئن کے نشے کی لت میں مبتلا تھا، لیکن پھر ایک دن میرے ساتھ ایسا واقعہ رونما ہوا کہ نشہ چھوڑ کر یہ کاروبار شروع کردیا اور اب انتہائی کم عرصے میں کروڑ پتی بن چکا ہوں‘ نوجوان کی ایسی کہانی جس سے ہر شہری سبق حاصل کرسکتا ہے

  

نیویارک(مانیٹرنگ ڈیسک) امریکہ میں ہیروئن کے نشے کی لت میں مبتلا ایک نوجوان نے نشہ چھوڑ کر ایک ایسا کاروبار شروع کیا کہ انتہائی قلیل مدت میں کروڑ پتی بن گیا۔ برطانوی نشریاتی ادارے کی رپورٹ کے مطابق خلیل رفعتی نامی اس 33سالہ شخص کی کہانی انتہائی متاثر کن ہے۔ وہ نشے کی لت میں اس قدر غرق ہو چکا تھا کہ اس کی زندگی خطرے میں پڑ چکی تھی۔ کئی بار وہ ہسپتال پہنچا اور ڈاکٹروں نے اس کی جان بچائی۔ اس کے پاس رہنے کو گھر اورکھانے کو روٹی نہیں ہوتی تھی اور وہ لاس اینجلس کی گلیوں میں سوتا تھا۔وہ سوکھ کر ہڈیوں کا ڈھانچہ بن چکا تھا اور اس کا وزن صرف49کلوگرام رہ گیا تھا۔

’ہم نے 11 لاکھ روپے سے یہ شرمناک کاروبار شروع کیا تھا، آج اس سے ہر سال 6 ارب روپے کماتے ہیں‘ دو نوجوانوں نے ایسی بات کہہ دی کہ جان کر ہی انسان کو شرم آجائے

خلیل کا کہنا ہے کہ ”میں اتنی بار گرفتار ہو چکا ہوں کہ اب مجھے یاد بھی نہیں ۔ پھر ایک روز میرے اندر احساس بیدار ہوا کہ مجھے اپنی زندگی تبدیل کرنی چاہیے۔ چنانچہ میں بحالی صحت کے مرکز چلا گیا جہاں 4ماہ تک میرا علاج ہوتا رہا۔ وہاں سے آنے کے بعد میں نے فروٹ جوس کا کاروبار شروع کر دیا اور اپنا ایک برانڈمتعارف کروایا جو خاص طور پر نشے کے افراد کی صحت کی بحالی کو مدنظر رکھتے ہوئے تیار کیا جاتا ہے۔ میرا مشروب دنوں میں مقبول ہو گیااور میں نے کئی شہروں میں اس کی برانچیں کھول لیں۔ آج میں کروڑ پتی ہوں اور مکمل صحت مند زندگی گزار رہا ہوں۔ میرے جوس برانڈ کی سالانہ فروخت 60لاکھ ڈالر(تقریباً 60کروڑ روپے ) سے زائد ہے۔“

مزید :

ڈیلی بائیٹس -