آج کے جلسے میں عمران خان پوچھے گا کہ مجھے کیوں نکالا ، بلاول بھٹو

آج کے جلسے میں عمران خان پوچھے گا کہ مجھے کیوں نکالا ، بلاول بھٹو
آج کے جلسے میں عمران خان پوچھے گا کہ مجھے کیوں نکالا ، بلاول بھٹو

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

اسلام آباد ( ڈیلی پاکستان آن لائن ) چیئرمین پاکستان پیپلزپارٹی بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ آج کے جلسے میں عمران خان پوچھے گا کہ مجھے کیوں نکالا۔

اسلام آباد میں جمہوری وطن پارٹی کے رہنما شاہ زین بگٹی کے ہمراہ میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے بلاول بھٹو نے کہا کہ شاہ زین بگٹی کا حکومت چھوڑ  کر  پی ڈی ایم میں شمولیت کا فیصلہ  بہت ہمت کا کام ہیں ،  عوام آج پارلیمان کی طرف دیکھ رہےہیں،عمران خان نےاپنے اتحادیوں کوبھی استعمال کیا، اپوزیشن اورعوام کودھوکادیاگیا،ہمیں ملک کو مسائل سے نکالنے  کیلئے ملکر محنت کرنا ہوگی ، دوسرے  اتحادیوں  سے ہماری اور دوری جماعتوں کی ملاقاتیں جاری ہیں ، اتحادی فیصلے کر چکے ہیں ، اب وزیر اعظم کا وقت ختم ہو چکا ہے ۔

بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ عوام عمران خان کی اصلیت پہچان چکے ہیں ، عوام جانتے ہیں کہ وہ کسی قسم کے پراپیگنڈے کا شکار نہیں ہوں گے ، ہم نے  تمام صوبوں کیلئے  این ایف سی ایوارڈ دیا تھا  اور کسی بھی صوبے کیلئے کٹ لگایا جا سکتا تھا ، بلوچستان کے این ایف سی فنڈ میں کٹ نہیں لگایا جا سکتا تھا، اس اقدام کا مقصد بلوچستان کے عوام کو یقین دلانا تھا کہ  ہم ان کے دکھ درد میں شریک اور زخموں پر مرہم رکھ رہے ہیں۔ صدر زرداری نے بطور صدر جب بلوچستان کے عوام سے معافی مانگی تو انہوں نےپاکستان اور آرمی کے چیف کمانڈر کی حیثیت سے معافی مانگی تھی ۔

ایک صحافی کے سوال کے جواب میں چیئرمین پاکستان پیپلزپارٹی نے کہا کہ سرپرائز دینے کیلئے اب بہت دیر ہو چکی ہے ، اب دھمکانے ، دبانے کی کوشش نہیں چلے گی   عمران خان  کا وقت ختم ہو چکا ہے ، وہ اکثریت کھو بیٹھے ہیں ،  عوام ہم سب کی طرف دیکھ رہے ہیں، بلوچستان کے عوام کا معاشی حل نہ کیا گیا تو ملک کو نقصان ہوگا ، ہم ہمیشہ بگٹی صاحب کے ساتھ مل کر  مسائل کی آواز اٹھانا چاہتے ہیں ۔ 

تحریک عدم اعتماد سے متعلق سوال پر  بلاول نے کہا کہ ہم سب جمہوریت پر یقین رکھتے ہیں ، غیر جمہوری شخص کو سلیکٹڈ کہتے ہیں ، صرف جمہوری ہتھیار اپنا کر اس کا مقابلہ کرینگے ، اس سےجمہوریت کا انتقام لیں گے ، تاریخ میں بہت سے  غیر جمہوری طریقے اپنائے گئے ہیں ،  ہم نے پورا زور دیا کہ جمہوری احجاج کرینگے ،  لیکن پارلیمان میں مقابلہ  کر کے جمہوری طریقے سے شکست دلائیں گے ، ہم کامیا ب ہو چکے ہیں ، عوام کو مبارکباد دیتے ہیں   کہ عمران  اکثریت کھو چکا ہے  ، اس کی حکومت ختم ہو چکی ہے ، اس کے پاس الیکشن جیتنے کیلئے کوئی جمہوری طریقہ نہیں ، البتہ دھاندلی کا طریقہ موجود ہے ، لیکن اب ہم بھی ادھر ہیں ۔

پنجاب اسمبلی توڑنے کی افواہوں  سے متعلق سوال پر بلاول نے مسکراتے ہوئے کہا کہ عمران خان نے اپنی شکست دیکھتے ہوئے فلاسفی اپنائی ہے کہ اگر مجھے کھیلنے نہیں دیا تو کسی کو کھیلنے نہیں دونگا  لیکن سٹیک ہولڈرز ہارے ہوئے شخص کی سازش کامیاب نہیں ہونے دیں گے ، ہم متفق ہیں کہ عوام کو فیصلے کرنے دیں ، آزاد حالات میں سیاست سے مسائل کا حل نکل سکتا ہے ۔

صحافی نے گورنر راج سے متعلق سوال پوچھا تو بلاول نے کہا کہ  عمران خان اکثریت  کھو چکاہے ،  گورنر راج  ، ایمرجنسی نافذ کرنا تو دور کی بات   وہ صدر کو کوئی ایڈوائس نہیں کر سکتا ۔ 

 بلاول نے کہا کہ عمران خان کی سیاست جھوٹ تھی  ، حکومت جھوٹ  ہے ، حکومت سے نکل کر بھی وہ جھوٹ بولے گا  مگر اب عوام اس کو جان چکے ہیں ۔

مزید :

اہم خبریں -قومی -