شام میں برطانوی جہادی کے ہاتھوں ''ننجاں'' کی تربیت

شام میں برطانوی جہادی کے ہاتھوں ''ننجاں'' کی تربیت

دمشق(ثناءنیوز)ایک طانوی جہادی کی شام میں صدر بشارالاسد کی فوج کے خلاف برسرپیکار گروپ کو تربیت دیتے ہوئے ویڈیو منظرعام پر آئی ہے۔ان افرادکو ''ننجا'' کا نام دیا گیا ہے کیونکہ وہ سرتاپا سیاہ لباس میں ملبوس ہیں۔برطانوی اخبار سنڈے ٹائمز میں شائع شدہ ایک رپورٹ کے مطابق اس ویڈیو میں ایک تئیس سالہ برطانوی نمودار ہورہا ہے جو یہ کہہ رہا ہے کہ ''دنیا میں کوئی بھی جگہ میدان جنگ سے بہتر نہیں ہے''۔اس نوجوان کے بارے میں بتایا گیا ہے کہ وہ ابو حفص الباکستانی پاکستانی کے نام سے شام میں لڑرہا تھا اور اسی ماہ شام میں صدر بشارالاسد کی فوج کے خلاف لڑتے ہوئے مارا گیا ہے۔

ویڈیو میں ابوحفص پاکستانی برطانیہ کی مڈل کلاس کے لہجے میں بول رہا ہے لیکن یہ واضح نہیں ہے کہ وہ برطانیہ کے کس علاقے سے تعلق رکھتا تھا۔البتہ اس کنیت اور نسبت سے یہ واضح ہے کہ وہ پاکستانی نژاد ہے۔ایک اور ویڈیو کلپ میں ابو حفص ال پاکستانی جہاد کو اپنی زندگی کے بہترین لمحات میں سے ایک قراردے رہا ہے اور کہتا ہے کہ ''آپ کی اگر آپ کے سامنے موت واقع ہورہی ہے تو اس موقع پر اللہ کے سوا کوئی بچانے والا نہیں ہوتا''۔شہید نام کی اس ویڈیو میں ایک اور برطانوی بتارہا ہے کہ ابو حفص ال پاکستانی شام کے باغی گروپ جند الاقصی سے تعلق رکھتا تھا۔سنڈے ٹائمز کی رپورٹ کے مطابق وہ شام کے شمالی علاقے میں ایک گاں کا دفاع کرتے ہوئے اسدی فوج کے خلاف لڑائی میں مارا گیا تھا۔

 

مزید : عالمی منظر