آسٹریلین ائر لائنز کے جہاز کینسر پھیلانے لگے

آسٹریلین ائر لائنز کے جہاز کینسر پھیلانے لگے
آسٹریلین ائر لائنز کے جہاز کینسر پھیلانے لگے

  

سڈنی (نوز ڈیسک)آسٹریلیا میں ہوائی جہازوں میں زہریلے دھوئیں اور شعاعوں کے باعث مسافروں اور عملے میں کینسر جیسے امراض پیدا ہونے کا انکشاف ہوا ہے ۔ آسٹریلین ٹرانسپورٹ سیفٹی بیورو کا کہنا ہے کہ ایئر لائنوں نے مسافروں کو کبھی بھی اس مسئلہ سے متعلق پیشگی اطلاع یا وارننگ نہیں دی ۔ یہ خبر اس وقت سامنے اائی جب آسٹریلیا کی ایک ایئر لائن میں کام کرنے والے ایک فلائٹ اٹینڈنٹ میں دماغی کینسر کی تشخیص ہوئی ۔ ستائیس سال تک قنٹاس ایئر لائن (Qantas)کے لئے کام کرنے والے بریٹ واس (Bret Vollos)کا کہنا ہے کہ اسے پارکنسز کی بیماری جہازوں میں پائے جانے والے زہریلے دھوئیں اور مضر صحت شعاعوں کی وجہ سے ہوئی اور اس بیماری کی وجہ سے جب وہ ہسپتال گیا تو معلوم ہوا کہ اسے دماغ کا کینسر ہو چکا ہے ۔ وہ اس معاملے کی مزید تحقیق کے لئے آسٹریلوی حکومت کے خلاف مقدمہ دائر کرنے کی تیاری کر رہا ہے۔اس کا کہنا ہے کہ جہازوں میں پائے جانے والے زہریلے مادوں اور عملے میں پائے جانے والے دماغ کے کینسر اور رسولیوں میں واضح تعلق ہے۔دریں اثناء ایک سابقہ پائلٹ نے بھی اپنی بیماری کی وجہ جہاز کے ایندھن سے کاک پٹ میں داخل ہونے والے دھوئیں کو قرار دیا ہے۔اس سلسلہ میں BA+146نامی جہاز کو خاص طور پر مور د الزام ٹھہرایا گیا ہے اور ایندھن س پیدا ہونے والے دھوئیں کے علاوہ جہازوں میں چھڑکی جانے والی جراثیم کش ادویات کو بھی ان بیماریوں کی وجہ قرار دیا جا رہاہے ۔

مزید : تعلیم و صحت