وکلا کا احتجاج ، ایکسائز اینڈٹیکسیشن کیلئے ریونیو خسارے کا باعث بن گیا

وکلا کا احتجاج ، ایکسائز اینڈٹیکسیشن کیلئے ریونیو خسارے کا باعث بن گیا

 لاہور(نیوز رپورٹر) صوبے بھر میں وکلا کا احتجاج ، ایکسائز اینڈٹیکسیشن کے لیے ریونیو خسارے کا باعث بن گیا۔محکمے نے جانی و مالی نقصان کے اندیشے کے پیش نظر گزشتہ روز پنجاب بھر کے ملازمین کو پولیس یونیفارم میں ٹوکن ٹیکس کی وصولی کرنے اور ناکے لگانے سے روک دیا۔ تفصیلات کے مطابق ڈسکہ ، سیالکوٹ میں بار کے صدر اور ایک دوسرے وکیل کی پولیس فائرنگ سے ہلاکت کے بعد وکلا نے احتجاجاً گزشتہ روز صوبے بھر میں نہ صرف عدالتوں کا بائیکات کیا بلکہ بعض مقامات پر پولیس کے ساتھ ہاتھا پائی اور پولیس کی گاڑیوں و سرکاری املاک کو نقصان بھی پہنچایا گیا۔احتجاج کا یہ سلسلہ سوموار سے جاری ہے۔ جس کو مد نظر رکھتے ہوئے ایکسائز اینڈٹیکسیشن ڈیپارٹمنٹ نے پنجاب بھر میں اپنے ملازمین کو گزشتہ روز پولیس کی وردیوں میں سٹرکوں پر ناکے لگانے اور نادہندہ گاڑیوں کے مالکان سے ٹوکن ٹیکس کی وصولی سے روک دیا۔یہ قدم محکمے کے ملازمین اور گاڑیوں و دیگر املاک کی حفاظت کے پیش نظر اٹھایا گیا۔ای اینڈ ٹی کے ملازمین کا کہنا ہے کہ ڈسکہ واقعے کے بعد صوبے بھر میں وکلاء مشتعل ہیں۔ اور پولیس کی گاڑیوں اور اہلکاروں کو نقصان پہنچاسکتے ہیں۔ ایسے میں پولیس یونیفارم پہن کر پولیس جیسی گاڑیوں میں ناکے لگاکر ٹوکن ٹیکس وصول کرنے کی کوشش کی گئی تو اشتعال کا رخ ان کی طرف بھی ہوسکتا ہے۔ اور حالات کا تقاضا یہی ہے کہ وکلاء کا احتجاج ختم ہونے تک سٹرکوں پر ٹوکن ٹیکس کی وصولی کا عمل روک دیا جائے۔ ریونیو خسارے

مزید : صفحہ آخر