خاندانی جمہوری نظام کی وجہ سے ملک خانہ جنگی کی طرف بڑھ رہا ہے، رحیق عباسی

خاندانی جمہوری نظام کی وجہ سے ملک خانہ جنگی کی طرف بڑھ رہا ہے، رحیق عباسی

 لاہور( نمائندہ خصوصی) پاکستان عوامی تحریک کی سنٹرل ورکنگ کونسل کے ہنگامی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے ڈاکٹر رحیق عباسی نے کہا کہ موجودہ خاندانی جمہوری نظام کی وجہ سے ملک خانہ جنگی کی طرف بڑھ رہا ہے ، لاہور اور سیالکوٹ میں رینجرز کا آنا پنجاب حکومت کی نا اہلی اور نا لائقی کا اعلان ہے ۔پنجاب کے محب وطن عوام ،سول سوسائٹی اور پڑھے لکھے نوجوانوں نے لوٹ کھسوٹ کے اس نظام کا راستہ نہ روکا تو قتل و غارت گری کی یہ آگ ہر گھر کی دہلیز تک پہنچ جائے گی ۔حکمرانوں کو عوام کی بجائے غیر ملکی بنکوں کی تجوریاں بھرنے کی فکر ہے،سانحہ ماڈل ٹاؤن،سانحہ ڈسکہ اور صحافیوں پر تشدد کے واقعات کے پیچھے موجودہ نام نہاد جمہوری حکمران ہیں ،سنٹرل ورکنگ کونسل کے اجلاس میں سانحہ ڈسکہ اور کراچی میں صحافیوں پر تشدد کی شدید الفاظ میں مذمت اور جاں بحق وکلاء کیلئے فاتحہ خوانی کی گئی ،اجلاس سے مرکزی سیکرٹری جنرل خرم نواز گنڈا پور ،شیخ زاہد فیاض ،احمد نواز انجم،بریگیڈئر(ر) اقبال احمد خان ، رانا فیاض ،فرح ناز،جواد حامد،ساجد بھٹی و دیگر نے خطاب کیا ۔ڈاکٹر رحیق عباسی نے CWC کے اجلاس میں بتایا کہ سربراہ عوامی تحریک ڈاکٹر طاہر القادری آج 27مئی شام 5:30بجے اہم پریس کانفرنس سے خطاب اور آئندہ کا لائحہ عمل دینگے ۔اجلاس میں جے آئی ٹی کی رپورٹ کے خلاف کارکنوں کے احتجاج پر اطمینان اور میڈیا کی بھر پور حمایت پر شکریہ ادا کیا گیا ۔انہوں نے کہا کہ جے آئی ٹی کی رپورٹ کا مقدر ڈسٹ بن اور قاتلوں کا انجام جیل کی کال کوٹھڑی ہے۔سیکرٹری جنرل خرم نواز گنڈا پور نے کہا کہ سانحہ ماڈل ٹاؤن اور سانحہ ڈسکہ انفرادی واقعات نہیں ،پولیس اور حکمرانوں کے مخصوص مائنڈ سیٹ کا نتیجہ ہیں۔

مزید : صفحہ آخر