امریکہ ہتھیار رکھنے ،استعمال کرنے اور اس سے قتل وغارت میں سرفہرست

امریکہ ہتھیار رکھنے ،استعمال کرنے اور اس سے قتل وغارت میں سرفہرست

نیویارک(مانیٹرنگ ڈیسک) امریکہ ہتھیار پیدا کرنے والا دنیا کا سب سے بڑا ملک ہے اور اس ملک کے شہریوں کے پاس بھی سب سے زیادہ اسلحہ ہے۔یہاں ہر 100افراد کے حصے میں 88.8ہتھیار آتے ہیں۔ امریکہ میں ہتھیاروں کی شرح جنگ کا شکار ملک یمن اور خانہ جنگی کی زد میں آئے ملک سربیا سے بھی زیادہ ہے، یمن میں 100لوگوں کے پاس 54.8جبکہ سربیا میں 37.8 ہتھیار موجود ہیں۔ کینیڈا میں یہ شرح 30.8ہے۔آتشیں اسلحہ سے ہونے والی ہلاکتوں کے حوالے سے بھی امریکہ ترقی یافتہ ممالک میں سرفہرست ہے۔امریکہ میں نیو ٹاؤن میں ہونے والی قتل و غارت کے بعد امریکی حکومت نے اس طرف توجہ دی ہے۔امریکی صدر اوباما نے اعلان کیا ہے کہ جنوری سے قبل آتشیں اسلحے کے متعلق قانون سازی کا بل کانگریس میں پیش کر دیا جائے گا۔ بل میں ممکنہ طور پربڑے ہتھیاروں پر دوبارہ پابندی کی سفارش کی جائے گی۔ اس سے قبل بھی امریکہ میں بڑے اسلحے پر پابندی لگائی گئی تھی جس کی مدت 2004ء میں ختم ہو گئی، تب سے دوبارہ پابندی لگانے کا بل کانگریس میں پیش نہیں کیا گیا۔مریکیوں کا ہتھیاروں کے متعلق رویہ باقی دنیا سے مختلف ہے اس لیے یہ خیال کیا جا رہا ہے کہ صدر اوباما کی طرف سے کانگریس میں پیش کیا گیا بل پاس نہیں ہو سکے گا۔ یونیورسٹی آف آئس لینڈ میں کریمنالوجی کے پرو فیسر ہیلجی گنلاگسن کا کہنا ہے کہ امریکی شہری ہتھیار رکھنے کا جواز یہ پیش کرتے ہیں کہ انہوں نے اپنے تحفظ کے لیے ہتھیار رکھا ہوا ہے، حالانکہ ایسا نہیں ہے۔

مزید : صفحہ اول