جعلی ڈگری کی تصدیق کیلئے بھی الگ رقم، ایگزیکٹ سیانی نہیں”شانی“ بھی نکلی

جعلی ڈگری کی تصدیق کیلئے بھی الگ رقم، ایگزیکٹ سیانی نہیں”شانی“ بھی نکلی
جعلی ڈگری کی تصدیق کیلئے بھی الگ رقم، ایگزیکٹ سیانی نہیں”شانی“ بھی نکلی

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

راولپنڈی (مانیٹرنگ ڈیسک) جعلی ڈگریوں کا کاروبار کرنے والی کمپنی ایگزیکٹ ناصرف جعلی ڈگریاں فروخت کر رہی تھی بلکہ اپنے ”کسٹمرز“ کو بلیک میل بھی کرتی تھی۔

تفصیلات کے مطابق ڈگری ہولڈرز کو جعلی ڈگری کا بتا کر متعلقہ یونیورسٹی سے رابطے کا کہا جاتا تھا اور پھر 2 سے 3 روز میں ڈگری کی تصدیق کا فون کیا جاتا اور اس مرحلے پر ڈگری لینے والوں کو بلیک میل کر کے اضافی رقم طلب کی جاتی تھی۔ نجی ٹی وی دنیا نیوز کے مطابق اضافی رقم کیلئے قونصلیٹ افسر بن کر کال کی جاتی تھی اس مد میں وصول ہونے والی رقم کیلئے مرچنٹ اکاﺅنٹس کا استعمال کیا جاتا تھا۔

رپورٹ کے مطابق مرچنٹ اکاﺅنٹس دبئی، امریکہ، لندن اور سعودی عرب میں بھی کھولے گئے جن میں سے رقم پہلے دبئی آفس میں اور پھر پاکستان منتقل کی جاتی جبکہ کمپیوٹر سافٹ وئیر کے ذریعے اس رقم کو سافٹ وئیر کی فروخت کی مد میں ظاہر کیا جاتا تھا۔ رپورٹ میں مزید بتایا گیا کہ ایگزیکٹ جعلی ڈگریوں کی فروخت اور تصدیق کے عمل میں حاصل ہونے والی رقم کا 80 فیصد دبئی سے وصول کرتا تھا۔

مزید : جرم و انصاف /اہم خبریں