چند روز قبل برہنہ حالت میں شیروں کے پنجرے میں چھلانگ لگانے والا نوجوان دراصل کون ہے؟ زندگی کی ایسی کہانی سامنے آگئی کہ جان کر آپ کو بھی بے حد افسوس ہوگا

چند روز قبل برہنہ حالت میں شیروں کے پنجرے میں چھلانگ لگانے والا نوجوان دراصل ...
چند روز قبل برہنہ حالت میں شیروں کے پنجرے میں چھلانگ لگانے والا نوجوان دراصل کون ہے؟ زندگی کی ایسی کہانی سامنے آگئی کہ جان کر آپ کو بھی بے حد افسوس ہوگا

  


سنٹیاگو (نیوز ڈیسک) ہفتے کے روز چلی کے دارالحکومت میں برہنہ ہوکر شیروں کے سامنے کودنے والے شخص کے بارے میں انتہائی افسوسناک حقائق سامنے آگئے ہیں، جن سے معلوم ہوتا ہے کہ یہ کوئی سرپھرا مہم جو نہیں بلکہ ماں کی موت کے غم میں نیم پاگل ہو جانے والا غم کا مارا نوجوان تھا۔

اخبار ڈیلی میل نے مقامی میڈیا کے حوالے سے بتایا ہے کہ 20 سالہ شخص کا نام فرانکو فیراڈا ہے اور وہ مختصر عرصے کے لئے چلی کی فوج میں بھی فرائض سرانجام دے چکا ہے۔ فرانکو کی والدہ کا انتقال 2006ءمیں ہوا، جب وہ صرف 10 سال کا تھا۔ اس کی نانی اور دیگر عزیزوں کا کہنا ہے کہ وہ اس سانحے سے شدید متاثر ہوا اور کبھی اس غم سے باہر نہ آپایا۔ اس کی والدہ کے انتقال کے بعد اس کے والد نے خود کو شراب نوشی میں غرق کرلیا اور اپنے 9بچوں کو بے سہارا چھوڑدیا۔ یہ تمام بہن بھائی ایک یتیم خانے میں پلتے رہے جہاں انہیں شدید سماجی و نفسیاتی مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔

رات گئے خاتون کے دروازے پر دستک، وہ سمجھی کوئی چور آگیا لیکن جب دروازہ کھولا تو ایسا خوفناک منظر کہ پیروں تلے زمین نکل گئی

ہفتے کے روز فرانکو نے اس وقت دنیا کو حیران کردیا جب وہ اپنا لباس اتار کر شیروں کے جنگلے میں کود گیا۔ سکیورٹی گارڈز نے اسے نوچنے والے ایک شیر اور شیرنی کو گولی مار کر ہلاک کردیا، جس کے بعد فرانکو کو شدید زخمی حالت میں ہسپتال لیجایا گیا۔ عینی شاہدین کا کہنا ہے کہ یہ شخص شیروں کے جنگلے میں کودتے ہوئے مذہبی کلمات ادا کر رہا تھا۔ وہ کہہ رہا تھا کہ وہ دنیا کا مسیحا ہے اور اپنے لوگوں کو بچانے کی خاطر دنیا میں واپس آیا ہے۔ اس کے لباس سے بھی ایک تحریر موصول ہوئی جس میں اس نے خود کو مذہبی ہستی قرار دیا تھا اور اپنے لوگوں کی اصلاح اور رہنمائی کے عزم کا اظہار کیا تھا۔

انڈیسا کلینک، جہاں فرانکو کا علاج کیا جارہا ہے، سے تعلق رکھنے والے ڈاکٹر سباسچین یوگارڈ کا کہنا تھا کہ یہ شخص دماغی مسائل کی وجہ سے خود کو ایک برگزیدہ مذہبی ہستی قرار دے رہا تھا اور سمجھ رہا تھا کہ جب وہ شیروں کے سامنے کودے گا تو آسمان سے اس کے لئے مدد آ جائے گی۔

ڈاکٹر سباسچین کا مزید کہنا تھا کہ فرانکو کے سر کندھوں، سینے اور جسم کے دیگر حصے پر شدید زخم آئے ہیں اور جب اسے ہسپتال لایا گیا تو اس کا دل تقریباً بند ہوچکا تھا۔ انہوں نے امید کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اس کی جان بچ جائے گی اور وقت کے ساتھ جسم کے زخم بھی مندمل ہوجائیں گے، لیکن دل پر لگا ماں کی جدائی کا زخم شاید کبھی مندمل نہ ہوسکے۔

مزید : ڈیلی بائیٹس


loading...