معیشت کی بہتری کیلئے وزیر خزانہ کا اپوزیشن سے مذاکرات کا عندیہ 

معیشت کی بہتری کیلئے وزیر خزانہ کا اپوزیشن سے مذاکرات کا عندیہ 

  

  اسلام آباد(آئی این پی)وفاقی وزیر خزانہ شوکت ترین نے کہا ہے کہ  وہ شہباز شریف  کے میثاق معیشت کی تجویز کی تائید کرتے ہیں ، وزیراعظم سے مشاورت کر کے اپوزیشن پارٹیوں کو بات کرنے کی دعوت دوں گا، ہم معیشت پر بات کریں گے، اختلافات ختم کر کے نئی سوچ کے ساتھ آگے بڑھنا ہوگا، اپوزیشن بھی اس ملک کی ہی اپوزیشن ہے، معیشت بہتر ہوگی تو اپوزیشن بجٹ میں ٹف ٹائم نہیں دے گی ، معیشت میں استحکام ہونا چاہیے،روز روز پالیسیاں تبدیل نہیں ہونی چاہئیں، سرمایہ کار بھی طویل دورانیے کی پالیسی چاہتے ہیں۔بدھ کو نجی ٹی وی چینل سے گفتگو کرتے ہوئے وفاقی وزیر خزانہ شوکت ترین نے کہا کہ معیشت میں استحکام ہونا چاہیے،روز روز پالیسیاں تبدیل نہیں ہونی چاہئیں، سرمایہ کار بھی طویل دورانیے کی پالیسی چاہتے ہیں،شہباز شریف نے چارٹر آف معیشت کی بات کی، میں بھی اس کی تائید کرتا ہوں، پیپلزپارٹی بھی اس پر گفتگو کرنے کیلئے تیار ہے، وزیراعظم سے مشاورت کر کے اپوزیشن پارٹیوں کو بات کرنے کی دعوت دوں گا، ہم معیشت پر بات کریں گے، اختلافات ختم کر کے نئی سوچ کے ساتھ آگے بڑھنا ہوگا، اپوزیشن بھی اس ملک کی ہی اپوزیشن ہے، معیشت بہتر ہوگی تو اپوزیشن بجٹ میں ٹف ٹائم نہیں دے گی۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے ریونیو بڑھانا ہے، ٹیکس نیٹ کیلئے مل کر کام کرنا ہوگا، ایکسپورٹ اور زراعت کو ترقی دینے کیلئے بہتر پالیسیاں بنانی ہوں گی،آئی ایم ایف تو چاہتی ہے کہ ٹیکس اور بجلی کے نرخ بڑھائے جائیں، ہم ایسا نہیں چاہتے، ٹیکس پر ٹیکس نہیں لگائیں گے، ہم آئی ایم ایف پروگرام کا حصہ ہیں اس سے نکلنا نہیں چاہتے۔انہوں نے کہا کہ آئی ایم ایف نے سخت پروگرام دیا جس سے معیشت متاثر ہوئی،غریب آدمی پر مزید بوجھ نہیں ڈالنا چاہتے، مہنگائی کی بڑی وجہ بنیادی اشیائے ضروریہ بھی باہر سے منگواتے ہیں جس کی وجہ سے مہنگائی میں اضافہ ہوتا ہے، ہم زراعت کو ترقی دیں گے تا کہ باہر سے چیزیں نہ منگوانی پڑیں،جیکب آباد سے پیاز 3روپے فی کلو بکتا ہے جو شہروں میں چالیس روپے کا فروخت کیا جاتا ہے،ہم مڈل مین کا خاتمہ کر کے فائدہ کسان کو پہنچائیں گے۔انہوں نے کہا کہ شرح نمو کا 3.94 کا ٹارگٹ پورا ہو جائے گا،اگلے سال ہم اس کو چار سے پانچ فیصد تک پہنچائیں گے۔

شوکت ترین

مزید :

صفحہ اول -