ملتان، کاشو خان قتل کیس کی سماعت31مئی تک ملتوی کرنیکا حکم

ملتان، کاشو خان قتل کیس کی سماعت31مئی تک ملتوی کرنیکا حکم

  

   ملتان (  خصو صی  رپورٹر  )ماڈل کریمنل کورٹ ملتان کے جج اختر(بقیہ نمبر60صفحہ7پر)

 حسین کلیار نے دو سال قبل ملتان کے علاقے گلگشت میں دو طلبہ گروپوں میں جھگڑے پر کاشو خان کے قتل کے مقدمہ میں ملوث 15 ملزموں کے خلاف کیس کی سماعت حوالاتی ملزمان کے پیش نہ کیے جانے پر 31 مئی تک ملتوی کرنے کا حکم دیا ہے۔اس موقع پر ملزمان حیدر علی، علی رضا اور فیضان بٹ بھی پیش ہوگئے جن کے گزشتہ روز بلاضمانت وارنٹ گرفتاری جاری ہوئے تھے۔ قبل ازیں فاضل عدالت میں پولیس تھانہ گلگشت کے مطابق 6 اپریل 2019 کو خالد خان نے مقدمہ نمبر 408 درج کرایا کہ وہ 5 اپریل کی شام کو دیگر افراد کے ہمراہ گاڑی پر جا رہا تھا کہ ملزموں نے روک کر مقدمہ بازی کا مزہ چکھانے کا کہتے ہوئے فائرنگ کر دی اور فرار ہو گئے نیز اس فائرنگ سے اس کا بیٹا خرم خان عرف کاشو خان زخمی ہو گیا جس کو پولیس نشتر ہسپتال لے گئے جہاں ملزمان بھی پہنچ گئے اور اس کے بیٹے کو تشدد کا نشانہ بنایا جس سے اس کا بیٹا ایمرجنسی میں ہی وفات پا گیا اور اس معاملہ میں مقتول کی ساس روبینہ ماہنور خاکوانی کی ایما بھی شامل ہے جس پر ملزم عبدالصمد خان نیازی کو قبل ازیں ایبٹ آباد سے گرفتار کیا گیا تھا، اور اسی مقدمہ میں ملزم عبید اللہ بھی زیر حراست رہا۔ تاہم اب غلام سرور کے علاوہ باقی 14 ملزمان عبدالصمد، محمد ندیم، معظم علی، عبیداللہ، احمد خان، راشد منہاس، سکندر حیات، انیس الرحمن، عاطف مرسلین، اویس، حیدر علی، علی رضا، فیضان بٹ اور روبینہ ماہنور ضمانتوں پر رہا ہیں اور مقدمہ کی پیروی نہ کرنے پر تین ملزمان کے بلاضمانت وارنٹ گرفتاری بھی جاری ہوئے تاہم وہ گزشتہ روز پیش ہوگئے آئندہ سماعت پر ملزمان کے زیر دفعہ 342 کے بیانات قلمبند کیے جائیں گے چونکہ کیس ٹرائل مکمل ہوچکا ہے۔

حکم

مزید :

ملتان صفحہ آخر -