موجودہ حکومت مجرموں کی پشت پناہی نہیں کرتی، وزیراعظم کا پولیس، رینجرشز کو ڈی جی خان میں ڈاکوؤں کیخلاف آپریشن کا حکم 

    موجودہ حکومت مجرموں کی پشت پناہی نہیں کرتی، وزیراعظم کا پولیس، رینجرشز ...

  

 لیہ (مانیٹرنگ ڈیسک،نیوزایجنسیاں)وزیراعظم عمران خان نے ڈی جی خان میں ڈاکوؤں کیخلاف رینجرز کوآپریشن کا حکم دیتے ہوئے کہاہے کہ ان ڈاکوؤں کو برداشت نہیں کریں گے جو اتنے عرصے سے مقامی لوگوں پر ظلم کررہے ہیں۔ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ حال ہی میں ڈی جی خان میں ڈاکوؤں نے غریب آدمی پر بڑا ظلم کیا ہے، آئی جی پولیس انعام اور رینجرز کو فون کروں گا کہ ان ڈاکوؤں کی خلاف سخت ایکشن لیں، وہاں پولیس چوکی بنائیں گے، فوری طور پر رینجرز کو پولیس کی مدد کرنے کا حکم دوں گا۔وزیر اعظم کا کہنا ہے کہ موجودہ حکومت مجرموں کی پشت پناہی نہیں کرتی، صحت سہولت کارڈ کے اجرا کی تقریب سے عمران خان کا خطاب کرتے ہوئے کہنا تھا کہ خواہش ہے ہر شہری کو صحت کارڈ کی سہولت میسر ہو، پنجاب اور خیبرپختونخوا میں صحت کی مفت سہولیات ملیں گی، کمزور طبقے کو اوپر لانے کیلئے اقدامات کر رہے ہیں، عوام کی خدمت کی جائے تو اللہ تعالیٰ خوش ہوتا ہے۔سرکاری ہسپتالوں میں عام عوام کیلئے کوئی سہولت نہیں تھی، چاہتا تھا پنجاب کے ہر خاندان کے پاس ہیلتھ کارڈ ہو، پاکستان دنیا میں تیزی کے ساتھ ترقی کر رہا تھا، پاکستان نے اسلامی فلاحی ریاست بننا تھا۔ انہوں نے کہا کہ برطانیہ میں سب کیلئے ایک قانون ہے، برطانیہ کے شہریوں کا ہر سرکاری ہسپتال میں مفت علاج ہوتا ہے، برطانیہ میں روزگار ملنے تک حکومت پیسے دیتی تھی۔وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ پنجاب اور خیبرپختونخوا میں صحت کی مفت سہولیات ملیں گی، کمزور طبقے کو اوپر لانے کیلئے اقدامات کر رہے ہیں، عوام کی خدمت کی جائے تو اللہ تعالی خوش ہوتا ہے،برطانیہ میں پہلی چیز قانون کی حکمرانی دیکھی، وہاں کوئی شہزادہ شہزادی سمیت کوئی بھی قانون سے بالاتر نہیں تھا دوسرا پہلی مرتبہ فلاحی ریاست دیکھی جہاں کوئی بھی سرکاری ہسپتال میں مفت علاج ہوتا تھا ، برطانیہ میں روزگار ملنے تک حکومت پیسے دیتی تھی۔  لیہ میں صحت سہولت کارڈ کے اجرا کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ میرا ایمان یہ ہے کہ اگر آپ کے پاس پیسہ نہیں ہے اس وقت بھی اگر آپ انسانیت کیلئے کوششیں کرتے ہیں انکی بہتری کیلئے پیسہ خرچ کرتے ہیں تو اللہ خوش ہوتا ہے اور وہ دیکھتا ہے کہ ریاست غریب طبقے کی مدد کررہی ہے تو وہ اس معاشرے میں برکت ڈالتا ہے۔  یہی وجہ تھی کہ ریاست مدینہ میں جب پیسہ بھی نہیں تھا اس وقت ریاست نے اپنے کمزور طبقے کی ذمہ داری لے کر دنیا کی تاریخ کی پہلی فلاحی ریاست قائم کی اور یہ دنیا گواہ ہے کبھی اتنا بڑا انقلاب نہیں آیا جو مدینہ کی ریاست لے کر آئی۔ وزیراعظم نے کہا کہ پاکستان کا بھی یہی موٹو ہے ہمارے پاس اتنا پیسہ نہیں ہے، مقروض ہیں، قرضوں پر سود دینے میں ہی آدھا پیسہ چلا جاتا ہے لیکن اس کے باوجود صوبہ خیبرپختونخوا اور پنجاب نے عوام کے لیے ہیلتھ انشورنس کا فیصلہ کیا، اس کی وجہ سے آپ لوگوں کے پاس پیسہ آئے گا۔ انہوں نے کہا کہ ایک وہ ہوتے ہیں جو کہتے ہیں کہ پہلے پیسہ اکٹھا کریں گے پھر فلاحی ریاست بنائیں گے دوسرے وہ جو ہماری طرح کے ہوتے ہیں اللہ پر یقین رکھتے ہیں اور سمجھتے ہیں کہ پہلے ہم لوگوں کی خدمت کریں گے پھر اللہ پیسہ دے گا۔ وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ جب پاکستان قائم ہوا تو اسے اسلامی فلاحی ریاست بننا تھا لیکن ہم نے کبھی یہاں فلاحی ریاست نہیں دیکھی۔ انہوں نے کہاکہ آج پنجاب کی 2ڈویژن کے خاندانوں کو ہیلتھ کارڈز دئیے جارہے ہیں۔ وزیراعظم نے کہا کہ ہر خاندان کے پاس 7 لاکھ20ہزار روپے کی ہیلتھ انشورنس ہوگی اور وہ صرف سرکاری نہیں بلکہ کسی بھی ہسپتال میں جا کر علاج کرواسکتے ہیں اور اگر پیسہ ختم ہوجائے تو علاج مکمل کروانے کیلئے مزید 3لاکھ روپے فراہم کیے جائیں گے۔

وزیراعظم 

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک،نیوزایجنسیاں) وزیراعظم عمران خان نے کہاہے کہ مسلم لیگ (ن) اور تحریک انصاف کے ادوار میں اینٹی کرپشن اور نیب کی کارکردگی میں واضح فرق ہے۔اہنی  ٹویٹ میں انہوں نے کہا کہ 31 ماہ میں پنجاب میں اینٹی کرپشن نے 220 بلین کی ریکوری کی، مسلم لیگ ن کے 10 سال کی نسبت اْن کی حکومت نے 192 بلین کی اراضی واگزار کروائی۔عمران خان نے کہا کہ نیب کی کارکردگی میں بھی واضح فرق ہے، 2018 سے 2020 کے دوران نیب نے 484 بلین روپے کی ریکوری کی، 1999 سے 2017 کے دوران نیب صرف 290 بلین روپے کی ریکوری کر سکا تھا۔ وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ جب حکومت بغیر رکاوٹ کے احتساب کرتی ہے تو نتائج اچھے آتے ہیں موجودہ حکومت مجرموں کی پشت پناہی نہیں کرتی۔

عمران خان 

مزید :

صفحہ اول -