پی پی کا اے این پی کے بغیر پی ڈی ایم میں شامل ہونے سے انکار 

پی پی کا اے این پی کے بغیر پی ڈی ایم میں شامل ہونے سے انکار 

  

ملتان (سٹاف رپورٹر) بات بگڑ گئی،پیپلزپارٹی اور اے این پی کے اپوزیشن جماعتوں کے اتحاد پی ڈی ایم میں واپسی کے امکانات مسدودہو گئے ہیں دونوں پارٹیاں شو کاز نوٹس کا جواب دینگی اور نہ ہی نرم لب و لہجہ استعما ل کیا جائے گا۔ پی ڈی ایم کے سیکرٹری جنرل شاہد خاقان عباسی کے بیان کے بعد پیپلزپارٹی کی مرکزی قیادت نے، موقف اختیار کیا ہے کہ وہ کسی پریشر میں نہیں آئیں گے اور نہ ہی وہ کسی کے تابع ہیں  پارٹی کی مرکزی قیادت کی جانب سے پارٹی عہدیداروں کو  اس ردعمل سے آگاہ کر دیا گیا ہے دریں اثناء اے این پی کی قیادت بھی واضح کہہ چکی ہے کہ ان کا پی ڈی ایم سے کوئی تعلق نہیں رہا ہے یہ امر بھی قابل ذکر ہے کہ پیپلزپارٹی، کسی صورت بھی اے این پی کے بغیر، اپوزیشن کی اتحاد پی ڈی ایم میں شامل نہیں ہوگی۔ معلوم ہوا ہے کہ میاں شہباز شریف کے اپوزیشن جماعتوں کے عشائیہ کے بعد پیپلزپارٹی اور اے این پی کی مرکزی قیادت سے رابطے ہوئے تھے دونوں طرف سے معاملات کو رفع کر نے اور دوبارہ سے اتحاد کو مضبوط کرنے بارے پیش رفت ہوئی تھی یہ خیال پیدا ہوا تھا کہ اپوزیشن جماعتیں ایک بار پھر سے متحد ہو کر حکومت کے خلاف تحریک چلائیں لیکن گذشتہ روز مسلم لیگ ن کے رہنماء پی ڈی ایم کے سیکرٹری جنرل شاہد خاقان عباسی کی جانب سے یہ بیان کہ پیپلزپارٹی کو معذرت کے بغیر پی ڈی ایم میں شامل کیا گیا تو وہ پی ڈی ایم کی سیکرٹری شپ کا عہدہ چھوڑ دینگے، پیپلزپارٹی کی مرکزی قیادت نے اس بیان کی تلخی کو مدنظر رکھتے ہوئے فیصلہ کیاہے کہ وہ کسی صورت شو کاز نوٹس کا جواب نہیں دینگے اور نہ ہی کسی قسم کی لچک کا مظاہرہ کریں گے۔ قبل ازیں میاں شہباز شریف کی رہائی کے بعد امکان پیدا ہو گیا تھا کہ اپوزیشن کی تمام جماعتوں کا اکٹھا کر لیا جائے پیپلزپارٹی اور اے این پی جو اتحاد سے باہر چلے گئے تھے ان کو اپوزیشن کے اتحاد میں واپس لایاجائے اس سلسلہ میں گذشتہ دنوں جب پیپلزپارٹی کے مرکزی وائس چئیرمین یوسف رضا گیلانی سے رابطہ کیا گیا تھا ان کا کہنا تھا کہ معاملات اس قدر نہیں بگڑے کے بات سلجھ نہ سکے صرف طریقہ کار بہتر کرنے کی ضرورت ہے لیکن شاہد خاقان کے سیکرٹری شپ سے علیحدہ ہونے کا بیان سامنے آنے پر ان کہنا ہے کہ پی ڈی ایم میں پیپلزپارٹی نے واپس جا نا ہے یا نہیں اس کا فیصلہ ان کی پارٹی قیادت کرے گی پارٹی قیاد ت نو بھی فیصلے کرے گی پارٹی میں سب کومنظور ہوگا۔ تاہم پارٹی کے بعض ذرائع کا کہنا ہے کہ اب بات مزید بگڑ گئی ہے۔

مزید :

صفحہ اول -