خاتون کے ہاں آئی وی ایف کے ذریعے بیٹی کی پیدائش لیکن دراصل باپ کون نکلا؟ ایسا انکشاف کہ پروسیجر کرنے والا ڈاکٹر ہی مشکل میں پھنس گیا

خاتون کے ہاں آئی وی ایف کے ذریعے بیٹی کی پیدائش لیکن دراصل باپ کون نکلا؟ ایسا ...
خاتون کے ہاں آئی وی ایف کے ذریعے بیٹی کی پیدائش لیکن دراصل باپ کون نکلا؟ ایسا انکشاف کہ پروسیجر کرنے والا ڈاکٹر ہی مشکل میں پھنس گیا

  

نیویارک(مانیٹرنگ ڈیسک) امریکہ میں ایک خاتون نے لگ بھگ 40سال قبل آئی وی ایف کے ذریعے بیٹی پیدا کی۔ اب جا کر اس بیٹی نے اپنا ڈی این اے ٹیسٹ کرایا تو ایسا ہولناک انکشاف ہوا کہ خاتون اور اس کی بیٹی نے پروسیجر کرنے والے ڈاکٹر کے خلاف مقدمہ درج کرا دیا ہے۔ ڈیلی سٹار کے مطابق امریکی ریاست نیوجرسی کی رہائشی اس خاتون کا نام بیانکا ووس ہے جس کی عمر اب 75سال اور اس کی آئی وی ایف کے ذریعے پیدا ہونے والی بیٹی کی عمر 40سال ہے۔ بیانکا نے ایک سپرم ڈونر سے نطفہ عطیہ لے کر آئی وی ایف کے ذریعے بیٹی پیدا کی تھی۔ 

آئی وی ایف پروسیجر 1983ءمیں نیویارک کے علاقے مین ہیٹن میں واقع ایک کلینک کے ڈاکٹر مارٹن گرین برگ نے کیا تھا۔ اسے عطیہ کیے گئے سپرمز اور بیانکا کے بیضوں کے ذریعے بچہ پیدا کروانا تھا مگر اس نے عطیہ کیے گئے سپرمز کی بجائے اپنے سپرمز استعمال کر ڈالے۔ کچھ عرصہ قبل بیانکا کی بیٹی رابرٹا نے اپنا ڈی این اے ٹیسٹ کرایا جس میں اسے اور اس کی والدہ کو پہلی بار علم ہوا کہ رابرٹا کا باپ نطفہ عطیہ کرنے والا نامعلوم شخص نہیں بلکہ آئی وی ایف پروسیجر کرنے والا ڈاکٹر مارٹن تھا۔

رپورٹ کے مطابق یہ انکشاف ہونے پر بیانکا اور رابرٹا نے نیویارک فیڈرل کورٹ میں ڈاکٹر مارٹن کے خلاف مقدمہ درج کرا دیا ہے، جس میں اسے پر’میڈیکل ریپ‘ (Medical Rape)کا الزام عائد کیا گیا ہے۔ڈاکٹر مارٹن کی طرف سے تاحال اس معاملے پر کوئی ردعمل سامنے نہیں آیا۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -