انتہائی خستہ حال گھر دینے پر افغان پناہ گزین میاں بیوی برطانوی علاقے نیوہیم کی مقامی حکومت پر برس پڑے

 انتہائی خستہ حال گھر دینے پر افغان پناہ گزین میاں بیوی برطانوی علاقے نیوہیم ...
 انتہائی خستہ حال گھر دینے پر افغان پناہ گزین میاں بیوی برطانوی علاقے نیوہیم کی مقامی حکومت پر برس پڑے

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) اپنے 11بچوں کے ساتھ ایک انتہائی خستہ حال گھر میں پھنسے افغان پناہ گزین میاں بیوی برطانوی علاقے نیوہیم کی مقامی حکومت پر برس پڑے۔ میل آن لائن کے مطابق 35سالہ وحید اللہ صفی اور اس کی 45سالہ اہلیہ بی بی صفی 2023ءمیں اس گھر میں منتقل ہوئے جو انہیں نیوہیم کونسل کی طرف سے دیا گیا تھا۔
وحید اللہ صفی کا کہنا ہے کہ گھر اس قدر خستہ حال تھا کہ دیواروں پر پھپھوندی لگی ہوئی تھی اور پورا گھر چوہوں کی آماجگاہ بنا ہو ا تھا۔ اس گھر میں شفٹ ہونے کے چند دن بعد ہی زیادہ تر بچوں اور خود میاں بیوی کو کھانسی کا عارضہ لاحق ہو گیا۔ انہوں نے بتایا کہ وہ اس گھر میں پھنس کر رہ چکے ہیں، نہ وہ اسے چھوڑ سکتے ہیں ا ور نہ یہ انسانوں کے رہنے کے قابل ہے۔
وحید اللہ نے بتایا ہے کہ اس گھر میں صرف ایک ٹوائلٹ ہے جو ان کی اتنی بڑی فیملی کے لیے ناکافی ہے۔ گھر میں صفائی کا انتظام نہ ہونے اور خستہ حال پھپھوندی لگی دیواروں کی وجہ سے کچھ بچے صحت مند ہوتے ہیں اور کچھ بیمار پڑ جاتے ہیں اور یہ سلسلہ اس گھر میں آنے کے بعد مسلسل جاری ہے۔نیوہیم کونسل کو ہم نے کئی بار شکایت کی ہے لیکن ان کی طرف سے ہماری کوئی مدد نہیں کی جا رہی، حالانکہ یہ گھر بچوں کے لیے بہت خطرناک ہے۔
وحید اللہ بتاتا ہے کہ ہم نے کئی بار درخواست دی ہے کہ ہمیں کسی اور جگہ منتقل کیا جائے لیکن ہر بار ہماری درخواست مسترد کر دی گئی ہے۔واضح رہے کہ وحید اللہ اور اس کی اہلیہ 2022ءمیں افغانستان پر ایک بار پھر طالبان کا قبضہ ہونے کے بعد برطانوی فوج کی مدد سے برطانیہ پہنچے تھے اور انہیں رہائش کے لیے برطانوی حکام کی طرف سے یہ گھر دیا گیا تھا۔ 

مزید :

برطانیہ -