وزیر اعظم شہباز شریف سے سمندر پار کشمیریوں کے وفد کی ملاقات

وزیر اعظم شہباز شریف سے سمندر پار کشمیریوں کے وفد کی ملاقات
وزیر اعظم شہباز شریف سے سمندر پار کشمیریوں کے وفد کی ملاقات

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن) وزیر اعظم شہباز شریف سے اوور سیز  کشمیریوں کے ایک وفد نے وزیر اعظم سیکرٹریٹ میں ملاقات کی،ملاقات میں مختلف امور پر تبادلہ خیال کیا گیا ۔

 کشمیری وفد میں ڈاکٹر غلام نبی فائی،  نذیر قریشی،  محمد غالب،  مزمل ایوب ٹھاکر،  فہیم کیانی،  ظفر قریشی، سردار ذوالفقار روشن خان اور ڈاکٹر ولید رسول شامل تھے۔

 وزیر اعظم شہباز شریف نے جموں و کشمیر کے تنازع اور بھارت کے غیر قانونی طور پر مقبوضہ جموں و کشمیر کے لوگوں کی حالت زار کے بارے میں عالمی سطح پر آگاہی بڑھانے کیلئے کشمیری کارکنوں کی کوششوں کو سراہا،انہوں نے کشمیریوں کے ناقابل تنسیخ حق خودارادیت کے حصول کے لیے کشمیریوں کی جدوجہد کے لیے پاکستان کی غیر متزلزل اخلاقی، سفارتی اور سیاسی حمایت کا اعادہ کیا، پائیدار امن اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی متعلقہ قراردادوں اور کشمیری عوام کی امنگوں کے مطابق جموں و کشمیر تنازعہ کے منصفانہ حل پر منحصر ہے۔

 انہوں نے کہ کشمیری بھائیوں اور بہنوں کی حمایت میں آواز اٹھانے میں کوئی کسر نہیں چھوڑی، 2022 کے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے ساتھ ساتھ شنگھائی تعاون تنظیم سمیت دیگر فورمز اور دیگر عالمی رہنماؤں کے ساتھ  ان کے حقوق پر بات چیت کی ہے۔

 وفد نے وزیراعظم کو بتایا کہ کشمیر میں بھارتی قابض افواج کے مظالم کی نوعیت غزہ کی طرح ہے،بے گناہ شہریوں کا قتل، نسلی تطہیر اور زمینوں پر قبضے کا آپریشن تیز رفتاری سے جاری ہے، سکول کے  بچوں کو اسلام سے دور کرنے کیلئے ایک منصوبہ بندی کی گئی ہے اور تعلیمی اداروں میں ہندو مذہبی منتر پڑھائے جا رہے ہیں، عالمی برادری بالخصوص اقوام متحدہ اور او آئی سی کو بھارتی حکومت کی ان مذموم سرگرمیوں کا سنجیدگی سے نوٹس لینا چاہیے اور انسانی حقوق کی ان خلاف ورزیوں سے باز رہنا چاہیے،وفد نے سیاسی  قیدیوں کے حالات پر بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ یاسین ملک، شبیر احمد شاہ، مسرت عالم، آسیہ اندرابی، ناہید فہمیدہ، صوفی نسرین، خرم پرویز، ڈاکٹر حمید فیاض اور دیگر کی رہائی کے لیے حکمت عملی تیار کرنے کی ضرورت ہے۔

 ڈاکٹر غلام نبی فائی نے حق خودارادیت کے ان کے اہم مقصد کو حاصل کرنے میں غیر متزلزل سیاسی اور سفارتی حمایت پر پاکستانی قوم کو ہندوستانی مقبوضہ کشمیر کے لوگوں کی تعریف کی اورکہا کہ ہمیں معلوم ہوا ہے کہ چند عالمی کیپٹل بھارت اور پاکستان دونوں کو تجارتی تعلقات بڑھانے پر آمادہ کر رہے ہیں،ان دارالحکومتوں نے مستقل طور پر کشمیر پر خودمختاری کے سوال سے بچنے کی کوشش کی ہے جب کہ یہ مسئلے کا دل ہے، اور اس پر نہ تو جرمانہ کیا جا سکتا ہے اور نہ ہی اس سے بچا جا سکتا ہے، ڈاجٹر غلام نبی فائی نے  کہا کہ وہ پاکستان کے اپنے پڑوسیوں کے ساتھ دوستانہ تعلقات استوار کرنے کے خلاف نہیں ہیں لیکن نارملائزیشن کے بارے میں3 پیرامیٹرز کی وضاحت کرنے کی ضرورت ہے، ایک یہ کہ کشمیر کا مسئلہ حق خود ارادیت کا ہے، دوسرا  کشمیری قیادت کو کسی بھی حل میں پسماندہ نہیں کیا جا سکتا،  تیسرا  بھارتی ریاستی دہشت گردی اور تجارتی تعلقات ایک ساتھ نہیں چلتے۔

 نذیر احمد قریشی نے آرٹیکل 370 کی منسوخی کے بعد بھارت کے زیر قبضہ کشمیر میں لوگوں کی ذہنی صحت پر گہری تشویش کا اظہار کیا، انہوں ننے کہا  کہ بھارت نوجوانوں میں منشیات کی تقسیم اور کشمیریوں کو ہندو مذہب اختیار کرنے پر مجبور کر رہا ہے ، انہوں نے  1980 کے بعد آزاد جموں و کشمیر میں نقل مکانی کرنے والے کشمیری تارکین وطن کو درپیش مشکلات پر بھی روشنی ڈالی ، حکومت سے درخواست کی کہ وہ ان کے قیام میں سہولت فراہم کرے اور متاثرہ نسل کیلئے جامع امداد کو یقینی بنائے۔

 مزمل ایوب ٹھاکر نے کہا کہ بھارت کی طرف سے اختلاف رائے رکھنے والوں کو قتل کرنے کے لیے بین الاقوامی جبر اور جلاوطنی میں مقیم تارکین وطن قیادت پریشان کن ہے، انہوں نے مزید کہا کہ بین الاقوامی سطح پر زمینی جذبات کو ابھارنے کیلئے کشمیریوں کو بااختیار بنانے کی ضرورت ہے۔

 فہیم کیانی نے کہا کہ پاکستان کو چاہیے کہ وہ مقبوضہ کشمیر کے ان لوگوں کو قومیتیں دے جن کی بھارتی شہریتیں منسوخ کر دی گئی ہیں، انہوں نے مزید کہا کہ سید علی گیلانی سے متعلق قرارداد پچھلی حکومت میں پاس ہوئی تھی جس کے 3 حصے تھے،دو حصوں پر عمل درآمد ہونا باقی ہے، اسلام آباد کی ایک یونیورسٹی ان کے نام پر رکھی جائے،دوسرا ان کی جدوجہد کو پاکستان کے نصاب میں شامل کیا جائے۔

 محمد غالب نے کہا کہ بھارت ڈومیسائل قانون بنا کر کشمیر کی ڈیموگرافی کو تبدیل کرنے کے چکر میں ہے، بین الاقوامی قوانین کی ان خلاف ورزیوں کو عالمی سطح پر اجاگر کرنے کی ضرورت ہے،کشمیری عوام کی جدوجہد اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی قراردادوں کے تحت اپنے حق خودارادیت کا استعمال کرنا ہے۔