آگ بجھانے کے لیے اسرائیلی وزیراعظم کی امریکہ سے طیارہ بھیجنے کی درخواست

آگ بجھانے کے لیے اسرائیلی وزیراعظم کی امریکہ سے طیارہ بھیجنے کی درخواست

واشنگٹن(این این آئی)اسرائیل یقیناًآگ بھڑکانے میں مہارت رکھتا ہے مگر بھڑکی ہوئی آگ کو ٹھنڈا کرنے میں نہیں۔ اسی واسطے اس نے گزشتہ روز ایک امریکی کمپنی سے امدادی کارروائی کا مطالبہ کیا جس کے پاس اتنا بڑا طیارہ ہے جو اکیلے ہی اس خوف ناک آگ کو بجھانے کی صلاحیت رکھتا ہے۔ وہ آگ جو 4 روز سے بھڑکی ہوئی ہے اور ابھی تک پھیل رہی ہے۔ مذکورہ طیارہ دن و رات بلا توقف آگ بجھانے کی کارروائی کے لیے دنیا کا سب سے بڑا طیارہ ہے۔ یہ 9 میٹر فی سیکنڈ (بارش) کی رفتار سے متاثرہ علاقے میں ایک ہی باری میں 74 ٹن پانی کا چھڑکاؤ کرتا ہے۔میڈیارپورٹس کے مطابق حالیہ آگ کے نتیجے میں ابھی تک اسرائیلی حکام 11 رہائشی علاقوں سے 60 ہزار افراد کا انخلاء عمل میں لا چکے ہیں۔ آگ پر قابو پانے کی کارروائیوں میں آگ بجھانے والے طیارے ، خصوصی تربیت کے حامل 200 فوجی اہل کار اور 5 ممالک کی معاونت شامل ہے۔ تاہم آگ کے پھر سے زور پکڑنے کا سلسلہ جاری ہے جس کے نتیجے میں اسرائیلی وزیراعظم بنیامین نیتنیاہو کے سامنے اس کے سوا کوئی چارہ نہ رہا کہ وہ امریکی کمپنی سے طیارہ بھیجنے کی درخواست کریں۔نیتن یاہو نے گزشتہ روز ایک پریس کانفرنس میں واضح کیا کہ اسرائیل میں لگی خوف ناک آگ کو بجھانے میں مصروف طیارے رات میں کام کرنے کی صلاحیت نہیں رکھتے۔ لہذا صرف سپرٹینکرکے نام سے معروف ایک ہی طیارہ ایسا کر سکتا ہے اور اس کے پہنچنے میں 24 گھنٹے درکار ہوں گے۔

مزید : عالمی منظر

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...