بھارت کی ہائی سیکیورٹی جیل پر پولیس وردیوں میں ملبوس افراد کا حملہ، خالصتان لبریشن فورس کے سربراہ ہرمیندرسنگھ سمیت 6قیدی چھڑا لئے ،انڈیا کی کئی ریاستوں میں ہائی الرٹ جاری

بھارت کی ہائی سیکیورٹی جیل پر پولیس وردیوں میں ملبوس افراد کا حملہ، خالصتان ...
بھارت کی ہائی سیکیورٹی جیل پر پولیس وردیوں میں ملبوس افراد کا حملہ، خالصتان لبریشن فورس کے سربراہ ہرمیندرسنگھ سمیت 6قیدی چھڑا لئے ،انڈیا کی کئی ریاستوں میں ہائی الرٹ جاری

  

نابھا(مانیٹرنگ ڈیسک) بھارتی پنجاب میں ضلع پٹیالہ کی نابھا ہائی سیکورٹی جیل پر پولیس کی وردیوں میں ملبوس نامعلوم افراد نے ہلہ بولتے ہوئے جیل میں قید خالصتان لبریشن فورس (کے ایل ایف) کے سربراہ ہرمندر سنگھ مٹا سمیت6 قیدیوں کو فرار کرانے میں کامیاب ہو گئے ،مسلح حملوں آوروں نے آتشی اسلحہ کا کھلم کھلا استعمال کیا جس سے 2 پولیس اہلکار زخمی ہوگئے ،جبکہ بھارتی وزارت داخلہ نے جیل کی ناقص سیکیورٹی پر اے ڈی جی جیل خانہ جات سنجیو گپتا کو معطل جبکہ نابھا جیل کے سپر ٹینڈیٹ اور ڈپٹی سپرٹینڈیٹ کو نوکریوں سے برخاست کر دیا ہے جبکہ بھارتی سیکیورٹی اداروں نے شام گئے اترپردیش سے نابھا جیل پر حملے کے الزام میں پروردر نامی شخص کو گرفتار اور بھاری مقدار میں اسلحہ و گو لہ بارود برآمد کرنے کا دعوی کیا ہے ۔ جیل سے فرار ہونے والے پانچوں مجرموں کی شناخت امن پریت ٹوڈا، وکی گوڈر، وکرمجیت بیکا، گرپریت اور نیٹو دیول کے طورپر کی گئی ہے۔

بھارتی نجی ٹی وی کے مطابق پولیس کی وردیوں میں ملبوس10 حملہ آوروں نے اس وقت جیل پر ہلہ بولا جب رات کی شفٹ تبدیل ہو رہی تھی اور صبح کی ڈیوٹی پر مامور اہلکار چارج لے رہے تھے ۔عینی شاہدین کے مطابق حملہ آور بڑی گاڑیوں میں آئے ،حملہ آوروں نے جیل سیکیورٹی کی آنکھوں میں دھول جھونکنے کے لئے اپنے ایک ساتھی کو فرضی قیدی بنا کر ہتھکڑی پہنا رکھی تھی تاکہ کسی کو ان پر شبہ نہ ہو، ملزموں نے گاڑیوں میں بڑے بڑے ٹرنک رکھے ہوئے تھے جن میں ہتھیار چھپائے گئے تھے ،تمام مجرم جیل کے مرکزی دروازے میں داخل ہو ئے اور جیل کے تمام ملازمین کو ہتھیاروں کی نوک پر قابو کرکے دوسرے دروازے کھلوا کر اپنے ساتھیوں تک پہنچ گئے، جہاں ان کے ساتھی پہلے سے ہی تیار بیٹھے تھے،حملہ آور ہوائی فائرنگ کرتے ہوئے ساتھیوں کے ساتھ فرار ہو گئے۔ جیل پر ہونمے والے حملے اور خالصتان لبریشن کے سربراہ ہرمندر سنگھ کے فرار نے پورے بھارت کو ہلا کر رکھ دیا ہے ۔

کانگریس نے کہا ہے کہ انتخابات سے قبل جیل ٹوٹنے کا واقعہ معمولی نوعیت کا نہیں ہے ،اس واقعہ سے ریاست ہی میں نہیں بلکہ پورے بھارت کی سیکیورٹی پر کئی سوالیہ نشان اٹھ کھڑے ہوئے ہیں اور اسمبلی انتخابات سے قبل دہشت گردی کے سر اٹھانے کا بھی خدشہ پیدا ہو گیا ہے ۔دوسری طرف پنجاب کانگریس کے صدر کیپٹن امریندر سنگھ نے کہا ہے کہ یہ جیل بریک ہوئی ہے اور میں دعویٰ سے یہ بات کرتا ہوں کہ جیل ٹوٹنے کے اس واقعہ میں ریاستی حکومت پوری طرح ملوث ہے ۔واضح رہے کہ کے ایل ایف کے50سالہ سربراہ ہرمیندر سنگھ مٹا کو نومبر 2014ء میں دہلی ائیرپورٹ سے گرفتار کیا گیا تھا ،ان پر 2008ء میں ڈیرہ سچاسوداکے سربراہگرمیت رام سنگھ پر ہونے والے حملے اور 2010ء میں لواڑ فضائیہ سٹیشن میں دھماکہ خیز مواد رکھنے سمیت دہشت گردی کے10مقدمات میں گرفتار کیا گیا تھا اور ان کے کیس عدالتوں میں زیر سماعت تھے ۔

دوسری طرف بھارتی سیکیورٹی فورسز نے اتر پردیش سے نابھا جیل پر حملے کے الزام میں پروردر نامی شخص کو گرفتار اور بھاری مقدار میں اسلحہ و گو لہ بارود برآمد کرنے کا دعوی کیا ہے،جبکہ بھارتی پنجاب اور اس سے ملحق پاکستانی سرحد اور پڑوسی ریاستوں کے آس پاس ہائی الرٹ جاری کر دیا گیا ہے۔ حملہ آوروں کی تلاش میں خصوصی ٹیموں کو لگایا گیا ہے اور تلاشی مہم بھی جاری ہے۔

مقبوضہ کشمیر، بستی کا گھیراؤ، بھارتی فائرنگ سے 2 شہید، حملوں میں فوجی اور 2 پولیس اہلکار ہلاک

مزید : بین الاقوامی