قومی زرعی ترقیاتی بینک لمیٹڈ کی جانب سے پنجاب کو نوازنے کا انکشاف ، ایک سال میں زرعی قرضوں کا 81 فیصد پنجاب کے کسانوں میں تقسیم

قومی زرعی ترقیاتی بینک لمیٹڈ کی جانب سے پنجاب کو نوازنے کا انکشاف ، ایک سال ...
قومی زرعی ترقیاتی بینک لمیٹڈ کی جانب سے پنجاب کو نوازنے کا انکشاف ، ایک سال میں زرعی قرضوں کا 81 فیصد پنجاب کے کسانوں میں تقسیم

  

اسلام آباد(آن لائن)قومی زرعی ترقیاتی بینک لمیٹڈ کی جانب سے پنجاب کو نوازنے کا انکشاف ہوا ہے، ایک سال میں زرعی قرضوں کا 81 فیصد پنجاب کے کسانوں میں تقسیم کیا گیا، باقی ماندہ پورے ملک کے کسانوں میں صرف 19 فیصد زرعی قرضہ تقسیم کیا جاسکا۔

دستاویزات کے مطابق زرعی ترقیاتی بینک نے 2015 میں 95 ارب روپے کا قرضہ تقسیم کیا ہے جس میں سے پنجاب میں 81 فیصد، سندھ 13.4 فیصد، خیبر پختونخوا 4.2 فیصد، بلوچستان 0.3 فیصد، آزاد جموں اور کشمیر 0.4 فیصد اور گلگت بلتستان کے کسانوں میں 0.4 فیصد زرعی قرضے تقسیم کئے گئے جس میں سے سب سے زیادہ قرضے بہاولنگر، بہاولپور، فیصل آباد، جھنگ،مظفر گڑھ،اوکاڑہ، سکھر اور وہاڑی شامل ہیں اسی طرح 2015 میں دیے جانے والے قرضوں کی ریکوری 92.2 فیصد رہی، پنجاب میں تقسیم کئے گئے قرضوں کی ریکوری 93.6 فیصد، سندھ 86.3 فیصد، خیبر پختونخوا 91.7 فیصد، بلوچستان 74 فیصد، آزاد جموں اور کشمیر 99.6 فیصد اور گلگت بلتستان میں تقسیم کئے گئے قرضوں کی ریکوری 90.1 فیصد رہی 2014میں زرعی ترقیاتی بینک نے81ارب روپے کے قرضے تقسیم کیے ہیں جبکہ 2013میں 71ارب روپے کا قرضہ تقسیم کیا ہے دستاویزات کے مطابق زرعی ترقیاتی بینک کسانوں کو 12.5 فیصد کی شرح سود پرزرعی قرضوں دے رہا ہے جبکہ نیشنل بنک و دیگر بینک کسانوں سے 15 فیصد سود وصول کر رہے ہیں واضح رہے کہ کسانوں کو بلند شرح سود پر قرضے دینے کے خلاف قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے خزانہ میں اراکین اسمبلی نے احتجاج کیا تھاجس میں زرعی قرضوں پر شرح سود مناسب حد کو7فیصد کرنے کی سفارش کی گئی۔

روزنامہ پاکستان کی خبریں اپنے ای میل آئی ڈی پر حاصل کرنے اور سبسکرپشن کیلئے یہاں کلک کریں

رکن اسمبلی رانا محمد حیات نے کہاتھا کہ 3 سال میں زرعی ترقی پر توجہ نہیں دی گئی، نون لیگ کی حکومت آئی تو ٹریکٹر پر شرح سود 8 فیصد تھی، آج ٹریکٹر کے قرضے پر 17 فیصد سود وصول کیا جا رہا ہے۔ان کا کہنا تھا کہ تاجروں اور صنعتکاروں کو 6 فیصد کی شرح پر سود دیا جا رہا ہے جبکہ زرعی قرضوں پر شرح سود 14 فیصد ہے۔انھوں نے کہا کہ حکومت زرعی قرضوں پر شرح سود میں کمی لائے، سبسڈی دینا حکومت کا کام ہے۔کمیٹی نے زرعی قرضوں پر شرح سود مناسب حد تک کم کرنے کی سفارش کی تھی۔

مزید : اسلام آباد