کراچی میں پولیس پر حملے پکڑے گئے دہشتگردوں کی گرفتاریوں کا ردعمل،کالعدم تنظیم ملوث ہو سکتی ہے :آئی جی سندھ اے ڈی خواجہ

کراچی میں پولیس پر حملے پکڑے گئے دہشتگردوں کی گرفتاریوں کا ردعمل،کالعدم ...
کراچی میں پولیس پر حملے پکڑے گئے دہشتگردوں کی گرفتاریوں کا ردعمل،کالعدم تنظیم ملوث ہو سکتی ہے :آئی جی سندھ اے ڈی خواجہ

  

کراچی(مانیٹرنگ ڈیسک)آئی جی سندھ اے ڈی خواجہ نے کراچی میں پولیس افسران ٹارگٹڈ حملوں کے حوالے سے کہا ہے کہ دہشت گردوں کی جانب سے ’’سافٹ ٹارگٹ کو نشانہ بنایا جا رہا ہے ،ڈی ایس پی فیض شگری اور ڈی ایس پی ٹریفک گلبرگ ظفر حسین پر حملے حال ہی میں پکڑے گئے دہشت گردوں کی گرفتاری کا ردعمل ہے ۔

مزید پڑھیں:ڈی ایس پی ٹریفک گلبرگ ظفرحسین کی گاڑی پر نا معلوم افراد کی فائرنگ ،حملے میں ظفر حسین محفوظ رہے

نجی ٹی وی ’’جیو نیوز ‘‘ کے مطابق ڈی آئی جی کراچی مشتاق مہر کے ہمراہ دہشت گردوں کی فائرنگ سے شہید ہونے وا لے ڈی ایس پی فیض شگری کے جائے حادثہ پر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے اے ڈی خواجہ کا کہنا تھا کہ دہشت گرد سافٹ ٹارگٹ کو اپنا نشانہ بنا رہے ہیں ،پولیس اہلکاروں کو نشانہ بنانے والے ایک گروہ کو ہم نے ختم کر دیا تھا لیکن حال میں پکڑے گئے دہشت گردوں کی گرفتاری کے بعد پولیس پر حملے ردعمل ہو سکتا ہے ۔انہوں نے کہا کہ ایک مخصوص گروپ پولیس افسروں کو نشانہ بنا رہا ہے ،اس واقعہ میں کالعدم تنظیم ملوث ہو سکتی ہے ،پولیس نے جائے وقوعہ سے شواہد جمع کر لئے ہیں جبکہ جائے حادثہ سے نائن ایم ایم کے 9خول بھی ملے ہیں ۔دوسری طرف ڈی آئی جی ٹریفک آصف اعجاز کا کہنا ہے کہ مقتول ڈی ایس پی فیض شگری سابق آئی جی سندھ افضل شگری کے قریبی رشتہ دار تھے ۔

مزید پڑھیں:نامعلوم دہشتگردوں کی فائرنگ ، ڈی ایس پی ٹریفک فیض علی شگری شہید، ڈرائیور زخمی

مزید : کراچی