شرکاء دھرنا پرتشدد قابل مذمت ،شرمناک ہے،شمس سواتی

شرکاء دھرنا پرتشدد قابل مذمت ،شرمناک ہے،شمس سواتی

راولپنڈی (نیوز رپورٹر)جماعت اسلامی کے ضلعی امیرشمس الرحمن سواتی نے کہا ہے کہ126دن کے دھرنے پرحکومت خاموش تماشائی بنی رہی جبکہ ختم نبوت ﷺقوانین میں ترمیم کے مجرموں کوسامنے لاکرمعزول کرنے کا مطالبہ کرنے والے دھرناشرکاء پرتشددکیا گیا جوقابل مذمت اورشرمناک ہے ،نوازشریف اوران کے حواری اسلام کے نام پر قائم ہونی والی اسلامی ریاست کولبرل اورسیکولربنانے کی سازش کررہے ہیں لیکن پاکستان کے 20کروڑ عاشقان مصطفے ﷺایسی کسی گھناؤنی سازش کوکامیاب نہیں ہونے دیں گے۔وفاقی وزیرقانون زاہد حامد سمیت جولوگ بھی ختم نبوت ﷺقوانین پروارکرنے میں ملوث ہیں انھیں فی الفورمعزول کرکے قانون کے مطابق سزادی جائے تاکہ آئندہ کسی فردکوبھی ناموس رسالت ﷺاورختم نبوت ﷺقوانین کے ساتھ کھلواڑکرنے کے جرات نہ ہو۔حکومت کی جانب سے فیض آبا د میں مذہبی کارکنان پر تشدداورگرفتاریوں پرشدیدردعمل کااظہارکرتے ہوئے امیرضلع نے کہاکہ گرفتارکارکنان کوفی الفوررہا کیا جائے ،حکومت جان بوجھ کرملک کے حالات خراب کررہی ہے جبکہ چوری کا مال برآمدہونے کے بعد چورکوکلین چٹ نہیں بلکہ قانون کے مطابق چوری کی سزادی جاتی ہے اس لیے لیگی قیادت ایسے اقدامات سے گریزکرے جن سے پورا ملک خانہ جنگی کی لپیٹ میں آجائے۔انھوں نے کہا کہ پاکستان ہی دنیا بھرکے مسلمان نبی اقدس ﷺکے حوالے بہت حساس ہیں عالمی استعمارکے اشاروں پرختم نبوت قوانین میں ترمیم حکومت کا بہت گھناؤنااقدام ہے لیکن جماعت اسلامی کے پارلیمانی لیڈرصاحبزادہ طارق اللہ کی بروقت نشاندہی کی بدولت حکومتی سازش کامیاب نہ ہوسکی اور لیگی حکومت کو ترامیم واپس لینا پڑیں ۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر