700سے زائد درآمدی اشیا ءپرریگولیٹری ڈیوٹی کے خلاف درخواست پر حکومت سے جواب طلب

700سے زائد درآمدی اشیا ءپرریگولیٹری ڈیوٹی کے خلاف درخواست پر حکومت سے جواب ...
 700سے زائد درآمدی اشیا ءپرریگولیٹری ڈیوٹی کے خلاف درخواست پر حکومت سے جواب طلب

  

لاہور(نامہ نگار خصوصی )لاہور ہائیکورٹ نے حکومت کی جانب سے 700سے زائد درآمدی اشیا پر عائد ریگولیٹری ڈیوٹی کے خلاف درخواست پر وفاقی حکومت اور ایف بی آر سے 30نومبر کو جواب طلب کر لیا ہے۔

کراچی سمیت دیگر شہروں میں دھرنے ختم،معمولات زندگی بحال،کاروباری مراکز اور مارکیٹیں کھلنا شروع ہو گئیں

مسٹر جسٹس شاہد کریم نے میسرز آدم ٹریڈرز کی آئینی درخواست پر سماعت کی، درخواست گزار کے وکیل نے موقف اختیار کیا کہ وفاقی وزیر خزانہ نے 700سے زائد درآمدی اشیا پر ریگولیٹری ڈیوٹی عائد کی ہے جبکہ قانون کے مطابق درآمدی اشیا پر ریگولیٹری ڈیوٹی عائد کرنے سے پہلے پارلیمنٹ سے منظوری نہیں لی گئی ہے جو کہ پارلیمنٹ کی بالادستی تسلیم نہ کرنے کے مترادف ہے، فنانس ایکٹ 2017ءکے سیکشن 18کی ضمنی دفعہ 3کے تحت وفاقی وزیر خزانہ کو ریگولیٹری ڈیوٹی عائد کرنے کا اختیار دیا گیا ہے جو کہ رولز آف بزنس 1973ءکی خلاف ورزی ہے ،درآمدی اشیا پر عائد کی گئی ریگولیٹری ڈیوٹی اور فنانس ایکٹ کی دفعہ 18کی ضمنی دفعہ 3کو آئین کے آرٹیکل 3، 9، 18، 23، 24، 77، 90، 91، 92، 97، 99، 142 اور 199سے متصادم قرار دے کر کالعدم کیا جائے، عدالت نے ابتدائی سماعت کے بعد حکومت کی جانب سے 700سے زائد درآمدی اشیا پر عائد ریگولیٹری ڈیوٹی کے خلاف درخواست پر وفاقی حکومت اور ایف بی آر سے 30نومبر کو جواب طلب کر لیا ہے۔

مزید : لاہور