سعودی فوج پہلی مرتبہ ایسی چیز لے کر یمن پہنچ گئی کہ ہر چہرہ کھل اٹھا

سعودی فوج پہلی مرتبہ ایسی چیز لے کر یمن پہنچ گئی کہ ہر چہرہ کھل اٹھا
سعودی فوج پہلی مرتبہ ایسی چیز لے کر یمن پہنچ گئی کہ ہر چہرہ کھل اٹھا

  

صنعاء(مانیٹرنگ ڈیسک) یمن کے حوثی باغیوں کے خلاف عسکری کاروائی کرنے والے ملک سعودی عرب کو اس جنگ میں عام شہریوں کی ہلاکت کے معاملے پر سخت تنقید کا سامنا ہے۔یمن کی ناکہ بندی سے ملک میں غذائی بحران کی کیفیت پیدا ہو چکی ہے اور بعض علاقوں میں قحط کا سماں ہے۔ ایسے میں سعودی عرب کے ہی ہوائی جہاز ڈھیروں امدادی سامان لے کر جنگ سے تباہ حال یمنی شہریوں کی مدد کو پہنچ گئی ہے۔

نیوز ویب سائٹ العربیہ کے مطابق سعودی ریلیف ایجنسی نے دارالحکومت صنعاءکے مشرق میں معارب کے علاقے میں امدادی اشیاءکے 32 ٹرک بھجوائے ہیں جن میں 791 ٹن غذائی اشیاءبھجوائی گئی ہیں۔ یمن کی ہائی ریلیف کمیٹی کے ساتھ مل کر ایک جامع امدادی منصوبہ ترتیب دیا گیا ہے جس کے تحت اگلے چند دنوں کے دوران یہ اشیاءضرورت مند افراد میں تقسیم کی جائیں گی۔ امدادی پراجیکٹ کے تحت صنعاء، معارب، جوف، البیدہ اور حضر موت کے علاقوں میں 49 ہزار سے زائد امدادی پیکٹ تقسیم کئے جائیں گے۔

انٹرنیٹ پر اسلام کے خلاف پراپیگنڈہ کون اور کیسے کررہا ہے؟ سب سے بڑی سازش بے نقاب ہوگئی، صرف انسان نہیں بلکہ۔۔۔ تہلکہ خیز حقیقت سامنے آگئی

دریں اثناءصنعاءائیرپورٹ کے کھلنے کی وجہ سے اقوام متحدہ کی جانب سے یمنی بچوں کے لئے ویکسین کی آمد کا سلسلہ بھی شروع ہوگیا ہے۔ یونیسف کے ریجنل ڈائریکٹربرائے مشرق وسطیٰ و شمالی افریقہ گیرٹ کیپر لیئر کا کہنا تھا کہ یمن میں چھ لاکھ سے زائد بچوں کو ویکسین کی ضرورت ہے۔ انہوں نے ائیرپورٹ کھلنے کو خوش آئند قرار دیا اور امید ظاہر کی کہ زیادہ سے زیادہ بچوں تک ویکسین پہنچائی جاسکے گی۔

مزید : عرب دنیا