قرآن پاک کی بے حرمتی کیخلاف ناروے سے ہرقسم کے تعلقات منقطع کیے جائیں‘ اپٹپما

قرآن پاک کی بے حرمتی کیخلاف ناروے سے ہرقسم کے تعلقات منقطع کیے جائیں‘ ...

  



لاہور(کامرس ڈیسک) آل پاکستان ٹیکسٹائل پروسیسنگ ملز ایسوسی ایشن (اپٹپما) فیصل آباد ریجن کے چیئرمین انجئنیر حافظ احتشام جاوید نے ناروے کے ایک شہری کی جانب سے قران پاک کی بے حر متی کئے جانے کے واقع کی شدید مذمت کرتے ہوئے حکومت پاکستان سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ فوری طور پر ناروے سے اپنا سفیر واپس بلانے کے ساتھ ساتھ ناروے کے سفیر کو ملک بدر کرنے کے علاوہ ان سے ہر قسم کے تعلقات منقطع کر دئیے جائیں تاکہ ایسے احتجاج سے دوسرے ممالک کو بھی عبرت حاصل ہو اور آئندہ کسی اور ملک میں کسی کو اس طرح کی جرأت نہ ہو سکے۔  

انہوں نے کہا توہین رسالت اور توہین شعائر اسلام کے حوالے سے کوئی بھی مسلمان کسی قسم کا سمجھوتہ نہیں کر سکتا، وزیر اعظم پاکستان نے ابھی کچھ عرصہ قبل جنرل اسمبلی سے اپنے خطاب کے دوران پوری دنیا کو خبردار کیا تھا ایسے مذموم واقعات مسلم اُمہ کیلئے شدید دکھ غم و غصہ اور اشتعال کا باعث بنتے ہیں اور آئندہ ایسی کوئی بھی حرکت برداشت نہیں کی جائے گی۔ کسی کے دینی معاملات میں مداخلت کی اسلام اجازت نہیں دیتا، ہر کسی کو اپنی دینی اقدار کے مطابق آزادی سے عمل پیرا ہونے کا حق حاصل ہے، انہوں نے یہ بھی کہا تھا کہ ایسے واقعات کی حوصلہ شکنی کیلئے ذمہ داروں کو دہشت گرد قرار دیتے ہوئے اس کے مطابق سزا ملنی چاہیے مگر افسوس کہ وزیر اعظم پاکستان کے خطاب کی روح کو غیر مسلم دنیا سمجھنے سے قاصر ہے کیونکہ اسلام امن و سلامتی کا دین ہے جس میں کسی قسم کے تشدد کی تر غیب نہیں دی جاتی بلکہ پیارو محبت اور احترام و انسانیت کا درس ملتا ہے۔ انجئنیر حافظ احتشام جاوید نے کہا پورے پاکستان کی کاروباری اور صنعتی برادری ناروے کے شہری کی اس حرکت پر شدید احتجاج کرتے ہوئے پاکستانی قوم سے اپیل کرتی ہے کہ وہ ناروے کی مصنوعات کا بائیکاٹ کریں تاکہ ان کو ایسی حرکت کے مضر اثرات کا اندازہ ہو سکے، اس موقع پر ہم اس مسلم نوجوان کو بھی خراج عقیدت پیش کرتے ہیں جس نے جذبہ ایمانی سے مغلوب ہو کر اس مذموم حرکت کے مجرم کو فورًا سبق سکھانے کی کوشش کی مگر اس راہ میں وہاں کے قانون نافذ کرنے والے ادارے متحرک ہوگئے اور ایسے گرفتار کرلیا جس کو  مسلمانوں کے احتجاج پر بعد ازاں رہا کردیا گیا۔ حکومت سے اپیل ہے کہ وہ ایسے واقعات کا سختی سے نوٹس لے کر ان کا تدارک کرے تاکہ آئیندہ ایسا کوئی واقعہ بھی رونما نہ ہو۔   

مزید : کامرس