ہمیں کہیں جانے کی اجازت نہیں ملی،کشمیری خوف زدہ،ہر انچ پر ایک فوجی کھڑا ہے:یشونت سنہا

ہمیں کہیں جانے کی اجازت نہیں ملی،کشمیری خوف زدہ،ہر انچ پر ایک فوجی کھڑا ...

  



سری نگر (آن لائن)وادی کشمیر کی موجودہ صورت حال کا جائزہ لینے کے لیے آنے والے پانچ افراد پر مشتمل وفد کا تین روزہ دورہ  اختتام پزیر ہوگیا۔ دورے کے دوران وفد نے ہر طبقے کے لوگوں سے ملاقات کی اور وادی میں پانچ اگست کے بعد عوام کو درپیش مشکلات اور نقصانات کی معلومات حاصل کیں۔سابق رکن پارلیمان یشونت سنہا نے صحا فیو ں  سے گفتگو کے دوران کہا کہ پانچ اگست کے بعد سے وادی کے عوام خوفزدہ ہیں۔ وہ کسی سے کھل کر بات نہیں کرنا چاہتے۔انہوں نے کہا کہ یہاں کے حالات ٹھیک نہیں ہیں۔ ہم  جنوبی کشمیر کے اضلاع پلوامہ، شوپیاں اور اننت ناگ جانا چاہتے تھے لیکن ہمیں جانے کی اجازت نہیں ملی۔ ہم نے پھر سرینگر کے نزدیک واقع ضلع بڈگام جانے کی بات کی تو وہاں کی اجازت بھی نہیں ملی۔ انہوں نے کہاکہ ہم پلوامہ نہیں جا سکے لیکن وہاں کے لوگ ہم سے ملنے آئے۔ ان کے علاوہ وادی کے ہر طبقے سے وابستہ افراد نے ہم سے ملاقات کی اور اپنی پریشانیوں سے ہمیں آگاہ کیا۔سیاسی رہنماؤں سے ملاقات کی بات پر انہوں نے کہا کہ انتظامیہ نے ہمیں ان سے ملنے نہیں دیا لیکن کچھ دیر کے لیے فون پر فاروق عبداللہ سے بات ہوئی تھی۔ وہ قوم پرست ہونے کے ساتھ ساتھ رکن پارلیمان ہیں لیکن ان کو پبلک سیفٹی ایکٹ کے تحت گرفتار کیا گیا ہے اور انہیں پارلیمنٹ میں حاضر ہونے کی اجازت بھی نہیں ہے۔یشونت سنہا نے یہ بھی تسلیم کیا کہ وادی کشمیر اب ایک ملٹری اسٹیٹ بنتا جا رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ 'جب ہم پہلے یہاں آئے تھے تب یہاں پر چپے چپے پر حفاظتی اہلکار تعینات تھے۔ آج ہر انچ پر ایک فوج کا بندہ کھڑا ہے۔ ان سب چیزوں سے بھی عوام میں خوف طاری ہوتا ہے۔ انہیں سب باتوں سے واضح ہوتا ہے کہ وادی کے حالات ٹھیک نہیں ہیں اور امید بھی نہیں ہے کہ یہاں کے حالات کب واپس معمول پر آئیں گے۔یشونت سنہا، کپل کاک، شوشبا باروے، وجاہت حبیب اللہ اور بھارت بھوشن پر مشتمل وفد وادی کشمیر کے 3 روزہ دورے پر سرینگر آیا تھا۔ساؤتھ ایشین وائر کے مطابق وفد کا کہنا ہے کہ وہ اپنی رپورٹ کے ذریعے کشمیر کے حالات کی اصلی تصویر منظر عام پر لائیں گے۔

یشونت سنہا 

مزید : صفحہ آخر