ایف بی آر ٹیکس نیٹ میں اضافے اور اصلاحات کیلئے سفارشات کی تیاریاں شروع

ایف بی آر ٹیکس نیٹ میں اضافے اور اصلاحات کیلئے سفارشات کی تیاریاں شروع

  



اسلام آباد(آن لائن)فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) نے ٹیکس نیٹ میں اضافے اور ایف بی آر میں اصلاحات کیلئے وزیر اعظم کی ہدایات کے مطابق سفارشات تیار کرنا شروع کردیں، تاجر طبقے،رئیل اسٹیٹ اور انڈسٹریز کو دستاویزی شکل دینے سمیت قومی شناختی کارڈ کو بزنس ٹرانزکشن میں بطور شناخت استعمال کرنے کے حوالے سے تجویز پر بھی عمل درآمد شروع کیا جائے گا۔تحریک انصاف کی حکومت نے ملک میں ٹیکس چوری کی روک تھام اور مختلف سیکٹرز کو ٹیکس نیٹ میں لانے کیلئے ایف بی آر کو ایک مفصل اور جامع اصلاحاتی منصوبہ تیار کرنے کی ہدایت کی ہے وزیر اعظم پاکستان عمران خان نے ایف بی آر حکام کو 30نومبر تک پلان تیار کرنے کی ہدایت کی ہے جس پر اگلے دو سالوں کے دوران عمل درآمد کیا جائے گا۔ایف بی آر کے ذرائع کے مطابق وزیر اعظم کے ساتھ ایف بی آر کے افسران کی ملاقات میں ٹیکس نیٹ میں اضافے کے سلسلے میں مختلف تجاویز اور سفارشات کا جائزہ لیا گیا۔ذرائع کے مطابق حکومت نے بیرون ممالک ہونے والے تمام بنک ٹرانزکشن میں قومی شناختی کار ڈ کو بطور شناخت ڈالنے کا فیصلہ کیا ہے اور اس پر جون 2020سے عمل درآمد کیا جائے گااجلاس میں اس امر کا بھی جائزہ لیا گیا کہ معیشت کو دستاویزی شکل دینے کی ذمہ داری پبلک اور پرائیویٹ سیکٹرز پر عائد ہوتی ہے ذرائع کے مطابق اس حوالے سے منعقدہ میٹنگ میں وزارت قانون و انصاف کو ہدایت کی گئی ہے کہ وہ اسٹیٹ بنک کی مشاورت سے بنکنگ لا میں 31دسمبر سے قبل ترامیم کے حوالے سے سفارشات تیار کریں تاکہ ایف بی آر حکام کے ساتھ فنانشل ٹرانزیکشن کا ڈیٹا شیئر کیا جا سکے اس سلسلے میں ایف بی آر چیئرمین شبر زیدی نے کہاہے کہ حکومت نے فیصلہ کیا ہے کہ ایف بی آر میں اصلاحات کے حوالے سے ایف بی آر کے افسران کو اعتماد میں لیا جائے گا۔

ایف بی آر

مزید : صفحہ آخر