نواز شریف کی تصاویر اور ویڈیو کپلس دیکھ کر افسوس ہوتا ہے:گورنر سندھ

نواز شریف کی تصاویر اور ویڈیو کپلس دیکھ کر افسوس ہوتا ہے:گورنر سندھ

  



کراچی(اسٹاف رپورٹر)گورنر سندھ عمران اسماعیل نے کہا ہے کہ میاں نواز شریف کو لندن میں علاج کرانے کے بجائے واپس ملک آکر اپنے مقدمات کا سامنا کرنا چاہیے کیونکہ لندن کے بازاروں اور گلیوں میں وہ جس طرح رٹیل تھراپی کرا رہیں ہیں اس سے ان کا وقار گر رہا ہے جبکہ مولانا فضل الرحمان کے پلان اے اور بی کا سلسلہ اب پلان ڈی اور ایچ میں داخل ہوچکا ہے اور بہت جلد ان کا پلان زیڈ بھی آجائے گا۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے آج ضلع سانگھڑ کے تعلقہ جام نواز علی میں سابق وفاقی وزیر جام معشوق علی کی برسی کی تقریب کے دوران میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کیا۔ گورنر عمران اسماعیل نے کہا کہ میاں نواز شریف بیماری کی وجہ بتا کر لندن گئے ہیں مگر لندن کے بازاروں اور گلیوں میں ان کی تصاویر اور وڈیوز دیکھ کر بہت افسوس ہو رہا ہے اور ایسا لگ رہا ہے کہ لندن کے بازاروں میں ان کی رٹیل تھراپی ہو رہی ہے اس سے اچھا ہے کہ نواز شریف واپس ملک آکر اپنے مقدمات کا سامنا کریں۔ انہوں نے کہا کہ نواز شریف لندن میں اسی گھر میں رہائش پذیر ہیں جو ملکیت انہوں نے تاحال اپنے اثاثوں میں ظاہر تک نہیں کی۔ انہوں نے کہا کہ نواز شریف کے ایسے اعمال دیکھ کر ان پر اندھا عقیدہ رکھنے والے ووٹرز کو بھی افسوس ہو رہا ہوگا اور وہ سوچ رہیں ہونگے کہ نواز شریف ہمیشہ مشکل وقت میں انہیں اکیلا چھوڑ کر ملک سے باہر چلے جاتے ہیں۔ مولانا فضل الرحمان کے ڈھرنے کے متعلق ایک سوال پر انہوں نے کہا کہ مولانا کا شو فلاپ ہو چکا ہے اور آج تک یہ پتا نہیں چل سکا کہ وہ کیوں دھرنے کے لئے آئے تھے اور واپس کیوں چلے گئے۔ انہوں نے کہا کہ دھرنے کے بعدسڑکیں بلاک کرنا ان کا پلان بی تھا مگر اب کا پلان ڈی اور ایچ مراحل میں داخل ہو چکا ہے اور بہت جلد ان کا پلان زیڈ بھی آجائے گا۔  ایک سوال پر گورنر عمران اسماعیل نے کہا کہ 18 وین ترمیم کے بعد ٹڈی دل سے بچاء کی لئے اسپری کرانا اور کتے کے کاٹنے سے بچاء کی ویکسین کا بندوبست کرنا صوبائی حکومتوں کا کام ہے مگر اس کے باوجود بھی سندھ کی وزیر نے ان سلسلے میں مدد کے لئے وفاق کو ایک خط بھی لکھا ہے۔ انہوں نے یقین دہانی کروائی کہ بہت جلد وفاقی حکومت ٹڈی دل سے بچاء کے لئے اسپری کرانے، کتے کے کاٹنے سے بچاء کی ویکسین، ایڈز اور پولیو کی بیماری سے بچاء کے لئے مزید اقدامات اٹھانے کے لئے مدد فراہم کرے گی جبکہ اس سلسلے میں عالمی ادارہ صحت سے بھی ایک معاہدہ ہوچکا ہے۔انہوں نے کہا کہ جام خاندان سے بہت پرانی وابستگی ہے ان سے ملنا جلنا رہتا ہے یہ وہ خاندان ہے جس نے پاکستان کے قیام میں نہ صرف ساتھ دیا بلکہ جہاں ضرورت پڑی وہاں قربانیاں بھی دیں تھی اور آج بھی یہ خاندان تیار رہتا ہے۔  اس موقع پر پاکستان پیپلز پارٹی کے ایم پی اے جام مدد علی، پاکستان تحریک انصاف کے رہنماء جام ذوالفقار علی، جام نفیس علی اور دیگر بھی موجود تھے۔

مزید : صفحہ آخر /ملتان صفحہ آخر