معروف شاعر سلیم احمد کا یومِ پیدائش(27نومبر)

معروف شاعر سلیم احمد کا یومِ پیدائش(27نومبر)
معروف شاعر سلیم احمد کا یومِ پیدائش(27نومبر)

  

سلیم احمد:

سلیم احمد 27نومبر1927ءکو بارہ بنکی (اترپردیش) میں پیدا ہوئے۔ روایت اور جدت کے حسین امتزاج سے ان کی شاعری میں ایک نیا ذائقہ ملتا ہےان

کی شاعری نے آنے والے ہر دور کے قاری کو متاثر کیا۔ سلیم احمد یکم ستمبر1983ءکو کراچی میں انتقال کر گئے۔ 

نمونۂ کلام

اہلِ دل نے عشق میں چاہا تھا جیسا ہو گیا 

اور پھر کچھ شان سے ایسی کہ سوچا ہو گیا 

عیب اپنی آنکھ کا یا فیض تیرا کیا کہوں 

غیر کی صورت پہ مجھ کو تیرا دھوکا ہو گیا 

 یاد نے آ     کر یکایک پردہ کھینچا دور تک 

میں بھری محفل میں بیٹھا تھا کہ تنہا ہو گیا 

کشتیِ صبر و تحمل میری طوفانی ہوئی 

رات کو تیرا بدن جب موجِ دریا ہو گیا 

کیا ہوا گر تیرے ہونٹوں نے مسیحائی نہ کی 

تیری آنکھیں دیکھ کر بیمار اچھا ہو گیا 

عشق مٹی کا عجب تھا مجھ کو بچپن میں سلیمؔ 

کھیل میں کیا سوچتا میں جسم میلا ہو گیا 

شاعر: سلیم احمد

Ehl-e-Dil   Nay   Eshq   Men   Chaaha   Tha   Jaisa   Ho   Gaya

Aor   Phir   Kuchh   Shaan   Say   Aisi   Keh   Socha   Ho   Gaya

 Aiab   Apni   Aankh   Ka   Ya   Faiz   Tera   Kaya   Kahun

Ghair   Ki   Soorat   Pe   Mujh   Ko   Tera   Dhoka   Ho   Gaya

 Yaad   Nay   Aa   Kar   Yaka   Yak   Parda   Khaincha   Door   Tak

Main   Bhari   Mehfil   Men   Baitha   Tha   Keh   Tanha   Ho   Gaya

 Kashti-e-Sabr-o-Tahammal   Meri   Toofani   Hui

Raat   Ko   Tera   Badan   Jab   Moj -e-Darya   Ho   Gaya

 Kaya   Hua   Agar   Teray   Honton   Nay   Maseehaai   Na   Ki

Teri   Aankhen   Daikh   Kar   Bemaar   Achha   Ho   Gaya

 Eshq   Matti   Ka   Ajab   Tha   Mujh   Ko   Bachpan   Men   SALEEM

Khail   Men   Kaya   Sochta   Main   Jism   Maila   Ho   Gaya

 Poet: Saleem   Ahmad

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -